The news is by your side.

Advertisement

لاہور ہائی کورٹ: وضو کا پانی پودوں کو دینے کا حکم

لاہور: ہائی کورٹ نے پانی محفوظ کرنے کی ایک درخواست کی سماعت کے دوران انتظامیہ کو حکم دیا ہے کہ پنجاب کی مساجد اور مزارات کے وضو کا پانی محفوظ کر کے پودوں کو دیا جائے۔

تفصیلات کے مطابق لاہور ہائی کورٹ میں پانی کو محفوظ کرنے کے لیے ایک درخواست پر سماعت ہوئی، عدالت نے حکم دیا کہ وضو کا پانی ضائع نہ کیا جائے بلکہ اسے پودوں کے لیے بھی محفوظ کر کے استعمال کیا جائے۔

خود کار سسٹم پر منتقل نہ ہونے والے سروس اسٹیشنز 10 روز میں بند کرنے کا حکم

عدالت نے چیئرمین پی اینڈ ڈی (پلاننگ اینڈ ڈویلپمنٹ بورڈ) کو پانی کے میٹرز فراہم کرنے کے لیے اقدامات کا حکم دے دیا۔

عدالت نے حکم دیا کہ تمام پرائیویٹ ہاؤسنگ سوسائٹیز سے پانی کے بل وصول کیے جائیں کیوں کہ یہ سوسائٹیز علاقہ مکینوں سے تو پانی کے چارجز لیتی ہیں۔

عدالت کی جانب سے خود کار سسٹم پر منتقل نہ ہونے والے سروس اسٹیشنز بھی 10 روز میں بند کرنے کا حکم جاری کر دیا گیا، جج نے کہا کہ سروس اسٹیشنز مالکان کو 2 ماہ کا وقت دیا تھا لیکن انھوں نے کچھ نہیں کیا، عدالتی احکامات پر عمل نہ کرنے والوں کو جیل بھجوا دیں گے۔

لاہور ہائی کورٹ نے ڈیموں کی تعمیر کو ملک کی بقا کے لیے ضروری قرار دیا۔


یہ بھی پڑھیں:  مساجد میں وضو کے لیے استعمال ہونے والا پانی پودوں کو دیا جائے گا


دوسری جانب چیف سیکریٹری پنجاب نے کہا کہ پانی کو محفوظ کرنے سے متعلق عمل درآمد کے مکینزم کا فقدان ہے، اس وقت پانی کی ایک ایک بوند قیمتی ہے، عدالتی حکم پر مِن و عن عمل کیا جائے گا۔

خیال رہے کہ 22 نومبر کو واسا (واٹر اینڈ سینی ٹیشن ایجنسی) نے مساجد میں وضو کے لیے استعمال ہونے والا پانی شہر میں ہریالی بڑھانے کے لیے استعمال کرنے کا فیصلہ کیا تھا۔

واسا نے کہا تھا کہ وضو کے دوران استعمال ہونے والا پانی ٹینکوں میں ذخیرہ کیا جائے گا، تاکہ یہ پانی ضائع نہ ہو اور ہریالی بڑھانے کے لیے کام آ سکے۔ واسا کا کہنا تھا کہ لاہور میں واقع مختلف پارکوں کے ساتھ بنی ہوئی 70 مسجدوں کے لیے ایسے واٹر ٹینک بنائے جائیں گے جن میں وضو کا پانی جمع کیا جائے گا۔

Comments

comments

یہ بھی پڑھیں