site
stats
پاکستان

شریف خاندان کی شوگر ملوں میں کرشنگ کیخلاف حکم امتناع میں 23 فروری تک توسیع

لاہور : لاہور ہائیکورٹ نے جنوبی پنجاب منتقل کی گئی شریف خاندان کی شوگر ملوں میں کرشنگ کیخلاف حکم امتناع میں 23 فروری تک توسیع کر دی۔

لاہور ہائیکورٹ میں شریف خاندان کی شوگر ملوں کی منتقلی کے حوالے سے کیس کی سماعت ہوئی، عدالت نے ریمارکس میں کہا کیا جنوبی پنجاب میں کپاس کی فصل اگنی چاہیئے یا نہیں۔

کسانوں نے مؤقف اختیار کیا کہ ملیں بند ہونے سے کسان شدید مشکلات کا شکار ہیں، جنوبی پنجاب میں گنے کی فصل زیادہ ہوتی ہے، دیگر فصلیں کم کاشت کی جاتی ہیں۔

شوگر ملز کے وکیل کا مؤقف تھا کہ صوبے میں ایک جگہ سے دوسری جگہ ملز کی منتقلی پر کوئی قانونی قدغن نہیں، دو مرتبہ پہلے بھی پابندی عائد کی گئی اور پابندی سے قبل ہی شوگر ملوں کو منتقل کیا گیا۔

عدالت نے دلائل سننے کے بعد ملوں میں کرشنگ کیخلاف حکم امتناع میں 23 فروری تک توسیع کر دی۔


مزید پڑھیں : شریف فیملی کی شوگر ملز سے متعلق کیس کی نظر ثانی کی درخواستیں خارج


گذشتہ روز چیف جسٹس ثاقب نثارکی سربراہی میں سپریم کورٹ تین رکنی بنچ نے شوگرملزکے جنوبی پنجاب میں منتقلی کیخلاف درخواست کی سماعت کی عدالت نے نظرثانی کی درخواستیں خارج کرتے ہوئے کہا کہ لاہورہائیکورٹ میں شوگرملوں سے متعلق کیس شروع ہوچکا ہے ہائی کورٹ کومعاملے کا فیصلہ کرنے دیا جائے۔

یاد رہے کہ سپریم کورٹ نے جنوبی پنجاب منتقل کی جانے والی شوگر ملز کو کرشنگ سے روکنے کے ساتھ ساتھ لاہورہائیکورٹ کو سات روز میں فیصلہ کرنے کا حکم دیا تھا ۔ عدالت نے اتفاق، چوہدری اورحسیب وقاص شوگرملزکے تمام آپریشن روکنے کا حکم دیا تھا۔

واضح رہے کہ چند روز قبل لاہور ہائیکورٹ نے بھی شریف خاندان کی تینوں شوگر ملزکو کرشنگ سے روک دیا تھا اور چیف جسٹس لاہور ہائی کورٹ نے وکیل کو وارننگ دیتے ہوئے کہا اگرکرشنگ ہوئی تو ذمے داری آپ پر عائد ہوگی۔

Print Friendly, PDF & Email
20

Comments

comments

اس ویب سائیٹ پر موجود تمام تحریری مواد کے جملہ حقوق@2018 اے آروائی نیوز کے نام محفوظ ہیں

To Top