The news is by your side.

Advertisement

لعل شہباز قلندر کا عرس ملتوی ہونے پر زائرین مشتعل، حالات کشیدہ

سیہون: سندھ کے تاریخی شہر میں معروف صوفی بزرگ لعل شہباز قلندر کا عرس ملتوی ہونے پر زائرین مشتعل ہوگئے۔

سندھ حکومت نے کرونا کی بگڑتی ہوئی صورت حال کے پیش نظر گزشتہ دنوں صوبے بھر کے  مزارات اور درگاہوں کو  28 مارچ سے 8 اپریل تک بند کرنے کا نوٹی فکیشن جاری کیا۔

محکمۂ اوقاف کی جانب سے جاری ہونے والے نوٹی فکیشن  کے  بعد حضرت لعل شہباز قلندر کے 769 ویں عرس کی تمام تقریبات کو منسوخ کردیا گیا تھا۔

تقریبات منسوخ ہونے کے باوجود عقیدت مندوں کی بڑی تعداد لعل شہباز قلندر کے مزار پہنچی اور جب انہوں نے مرکزی دروازے کو بند دیکھا تو انتظامیہ سے اسے کھولنے کا مطالبہ کیا۔

اتنظامیہ کے انکار کے بعد زائرین نے مرکزی دروازے کو توڑا اور وہ مزار کے احاطے میں داخل ہوگئے۔ پولیس نے زائرین کو روکنے کی کوشش کی تو انہوں نے جواب میں پتھراؤ کیا جس سے 8 اہلکار زخمی ہوئے۔

مزید پڑھیں: درگاہوں اور مزارات سے متعلق نئے احکامات آ گئے

زائرین نے درگاہ کے قریب کھڑی پانچ موٹر سائیکلوں کو بھی نذر آتش کیا جبکہ مرکزی دروازے کو توڑ کر اندر لگی قناعتوں کو بھی پھاڑ دیا۔ ذرائع کے مطابق مشتعل مظاہرین کا تعلق پنجاب سے ہے ۔

بعد ازاں انتظامیہ نے صورت حال کو قابو کرنے کے لیے رینجرز سے مدد مانگی جس کے بعد رینجرز اہلکار بڑی تعداد میں درگاہ پہنچے اور حالات کو قابو  کرنے کے بعد مزار کا کنٹرول سنبھالا۔

Comments

یہ بھی پڑھیں