The news is by your side.

Advertisement

دیا مربھاشا ڈیم پراجیکٹ کی تعمیر کیلئے انتہائی اہم پیش رفت، دیرینہ تنازعہ حل

اسلام آباد : تھور اور ہربن قبائل کے درمیان حدود کا دیرینہ تنازعہ حل کر لیا گیا ہے، جو دیامربھاشا ڈیم پراجیکٹ کی تعمیر کیلئے انتہائی اہم پیش رفت ہے۔

تفصیلات کے مطابق جو دیامربھاشا ڈیم پراجیکٹ کی تعمیر سے متعلق اہم پیش رفت سامنے آئی ، گرینڈ جرگے میں تھوراورہربن قبائل میں حدود کا دیرینہ مسئلہ حل ہوگیا، دونوں قبائل کے درمیان مذکورہ تنازعہ کے حل کی وجہ سے گلگت بلتستان اور خیبر پختونخواکے مابین حد بندی کا مسئلہ حل کرنے میں بھی مدد ملے گی۔

حدود کا تنازعہ حل ہونے کا تاریخی اعلان تھور ہربن گرینڈ جرگہ نے آج دیامربھاشاڈیم پراجیکٹ سائٹ پر منعقد ہونے والی خصوصی تقریب میں کیا۔

فیصلے میں کہا گیا کہ تنازعے میں 4 جاں بحق افراد کو 50،50 لاکھ اور زخمیوں کو 25،25،لاکھ روپے کا معاوضہ ادا کیا گیا، آئندہ چند دنوں میں گرینڈ جرگہ حدود بندی کا تعین کرنے کا پابند ہے۔

تھور ہربن حدود تنازہ میں کئی جانیں ضائع ہوئی اور لوگوں کے املاک کو نقصان پہنچا تھا، جاں بحق افراد کے لواحقین کو واپڈا میں ایک،ایک ملازمت دینے کے پابند بھی ہوں گے، گرینڈ جرگہ نے مزید ملازمتوں میں اپنی سفارشات بھی پیش کی۔

گرینڈ جرگہ کے 26ارکان کے علاوہ چیئرمین واپڈا لیفٹیننٹ جنرل مزمل حسین (ریٹائرڈ)، فورس کمانڈر ایف سی این اے میجر جنرل جواد احمد، جنرل منیجر لینڈ ایکوزیشن اینڈ ری سیٹلمنٹ واپڈا بریگیڈیئر شعیب تقی (ریٹائرڈ)،جنرل منیجر اینڈ پراجیکٹ ڈائریکٹر راؤ محمد یوسف اور صوبائی حکومت گلگت بلتستان کے ممبران نے شرکت کی۔

انجنیئر محمد نور خان،حاجی رحمت خالق، حاجی گلبر خان اور صوبائی حکومت خیبر پختونخواہ کے ممبر ایم پی اے دیدار خان کے علاوہ کمشنر دیامر استور ڈویژن،ڈپٹی کمشنر دیامر،ایڈیشنل ڈپٹی کمشنر اپر کوہستان،اور دیامر ضلع سے تعلق رکھنے والے ایم ایل ایز، مقامی عمائدین،واپڈا کے سینئر آفیسرز اور تھور اور ہربن قبائل کے لوگوں کی بڑی تعداد تقریب میں شریک ہوئی۔

تھور ہربن گرینڈ جرگہ دونوں قبائل کے درمیان حدود کے تنازعہ کو حل کرنے کیلئے 2019ء کے آخر میں تشکیل دیا گیا تھا، گرینڈ جرگہ کے ارکان کی تعداد 26ہے جن میں سے 13 کا تعلق گلگت بلتستان کے ضلع دیامر سے جبکہ 13کا تعلق خیبر پختونخوا کے ضلع اپر کوہستان سے ہے۔

ارکان میں اکابرین اور مذہبی علماء شامل ہیں، گزشتہ دوسال کے دوران گرینڈ جرگہ کے متعدد اجلاس منعقد ہوئے ، جس میں تنازعہ کے تمام پہلوؤں پر تفصیلی غور وخوض کیاگیا۔

گرینڈ جرگہ کے اجلاس اور کارروائی کے دوران گلگت بلتستان اور خیبر پختونخوا کی سول انتظامیہ اور واپڈا نے بھر پور معاونت فراہم کی اور گرینڈ جرگہ کے فیصلوں کی روشنی میں چیئر مین واپڈا،کمانڈر ایف سی این اے اور گرینڈ جرگہ کے ارکان نے تقریب میں دونوں قبائل کے درمیان2014ء کے تصادم کے متاثرین کو زرتلافی کے طور پر 40کروڑ روپے کے چیک تقسیم کئے۔

تقریب سے خطاب کرتے ہوئے چیئرمین واپڈا نے تھور اور ہربن قبائل کے درمیان حدود کا پیچیدہ تنازعہ حل کرنے پر گرینڈ جرگہ کا شکریہ اداکیا، انہوں نے اس ضمن میں گلگت بلتستان اور خیبر پختونخواہ کی سول انتظامیہ کے علاوہ لینڈ ایکوزیشن اینڈ ری سیٹلمنٹ واپڈا کی خدمات کو بھی سراہا۔

خیال رہے دیامربھاشا ڈیم دریائے سندھ پر چلاس سے زیریں جانب تعمیر کیا جارہا ہے، اس منصوبہ کی تکمیل2028-29 میں متوقع ہے، منصوبے کی بدولت 8.1 ملین ایکڑ فٹ پانی ذخیرہ ہوگا، جس سے 1.23 ملین ایکڑ زمین سیراب ہوسکے گی۔

منصوبے کی بجلی پیدا کرنے کی صلاحیت ساڑھے4ہزار میگاواٹ ہے، یہ منصوبہ قومی نظام کو ہر سال 18 ارب یونٹ کم لاگت اور ماحول دوست بجلی مہیا کرے گا اور اس منصوبے کی وجہ سے تربیلا ڈیم کی عمر میں بھی 35سال اضافہ ہوگا۔

Comments

یہ بھی پڑھیں