The news is by your side.

Advertisement

بریانی فروخت کرنے والا یہ لڑکا کون ہے؟؟ جانیے

گزشتہ کچھ عرصے سے ملک میں بڑھتی ہوئی مہنگائی اور بیروزگاری میں اضافے سے ہر کوئی پریشان ہے، ایسے حالات میں عالمی وبا کورونا کے سبب لاک ڈاؤن نے رہی سہی کسر بھی پوری کردی۔

اسی پریشانی کی وجہ سے  اچھے بھلے پڑھے لکھے نوجوان بھی نوکری نہ ہونے اور محدود وسائل کے باعث معمولی نوعیت کے کاروبار کرنے پر مجبور ہیں، صوبہ سندھ کے شہر لاڑکانہ میں بریانی فروخت کرنے والے نوجوانوں کو بھی ان کے معاشی حالات بریانی بیچنے تک لے آئے ہیں۔

بریانی فروخت کرنے والا یہ عبدالصمد کوئی عام نوجوان نہیں بلکہ پڑھا لکھا انجنیئر ہے جس نے بیروزگاری سے تنگ آکر اپنے گریجویٹ دوست عاشر عباسی کے ہمراہ لاڑکانہ کی سچل کالونی میں بریانی فروخت کرنے کا کام شروع کردیا۔

اے آر وائی نیوز کے نمائندے سے گفتگو کرتے ہوئے عبدالصمد نے بتایا کہ میں نے ایگری کلچر ڈپارٹمنٹ میں انجینئرنگ پاس کی ہے، ملازمت نہ ملنے کے باعث ایک سال سے بے روزگار تھا۔

محکمہ ایگری کلچر میں نوکریاں آئی تھیں لیکن وہاں ہمیں درخواست دینے کے قابل بھی نہیں سمجھا گیا، مجھے سندھ حکومت سے بہت مایوسی ہوئی، تو اس کے بعد ناامید ہو کر بریانی بیچنے کا کام کرنا پڑا۔،

عاشر عباسی نے اے آر وائی نیوز کو بتایا کہ اس نے 2019 میں گریجویشن کی تھی لیکن تاحال نوکری نہیں ملی جس کے بعد دونوں دوستوں نے بریانی کو روزگار کا ذریعہ بنا لیا۔

انہوں نے مطالبہ کیا ہے کہ سندھ حکومت ہمیں نوکریاں فراہم کرے اور ٹیسٹ دینے کا موقع دے تاکہ ہماری پریشانیوں میں کمی آسکے۔

Comments

یہ بھی پڑھیں