The news is by your side.

Advertisement

وزارت قانون کی محسن داوڑ اور علی وزیر کے پروڈکشن آرڈرز جاری کرنےکی مخالفت

اسلام آباد: وزارت قانون نے اسپیکر اسمبلی کو تجویز دی ہے کہ وہ علی وزیر اور محسن داوڑ کے پروڈکشن آرڈرز جاری نہ کریں۔

تفصیلات کے مطابق اسپیکر اسمبلی نے شمالی اور جنوبی وزیرستان سے منتخب ہونے والے اراکین اسمبلی علی وزیر اور محسن داوڑ کے پروڈکشن آرڈرز جاری کرنے سے متعلق وزارتِ قانون سے قانونی رائے طلب کی تھی۔

وزارت قانون نے اسپیکر کو محسن داوڑ،علی وزیرکےپروڈکشن آرڈرزجاری نہ کرنے کی تجویز دیتے ہوئے کہا ہے کہ دونوں ارکان پردہشت گردی  کے مقدمات اور سنگین الزامات ہیں۔ ایسی صورت میں پروڈکشن آرڈرز جاری کرنے کی مثال نہیں ملتی۔ وزارت قانون نے اپنی رائے میں بلدیو کمار کیس کا حوالہ بھی دیا ہے۔

مزید پڑھیں: آصف زرداری اور خواجہ سعد رفیق کے پروڈکشن آرڈر جاری

یاد رہے کہ آزاد اراکین اسمبلی علی وزیر اور محسن داوڑ پر خڑ کمڑ چیک پوسٹ پر حملے سمیت ریاست کے خلاف ہرزہ سرائی کے مقدمات درج ہیں، دونوں رہنما عدالتی حکم پر اس وقت جیل میں موجود ہیں۔ پی ٹی ایم سے کام کرنے والے اراکین پر الزام ہے کہ انہوں نے معصوم لوگوں کو ریاستی اداروں کے خلاف اکسایا اور ملک مخالف نعرے بھی لگوائے۔

یہ بھی یاد رہے کہ اپوزیشن کی جانب سے چار اراکین اسمبلی کے پروڈکشن آرڈرز جاری کرنے کا مطالبہ کیا تھا البتہ اسپیکر قومی اسمبلی نے آصف علی زرداری اور خواجہ سعد رفیق کے پروڈکشن آرڈز جاری کیے تھے جبکہ محسن داوڑ اور علی وزیر کے حوالے سے وزارتِ قانون سے رائے طلب کی تھی۔

Comments

comments

یہ بھی پڑھیں