site
stats
پاکستان

مقبوضہ کشمیر میں بھارتی فوج کے تشدد سے مسلمان لیکچرارجاں بحق

مقبوضہ کشمیر میں قابض بھارتی فوجیوں کے ہاتھوں کالج کے ایک استاد کی مبینہ ہلاکت کی تحقیقات کا حکم دے دیا ہے 30 سالہ لیکچرار شبیر احمد منگو کی ہلاکت کا واقعہ بدھ کی شب ضلع پلوامہ کے علاقے کھیو میں پیش آیا تھا.

تفصیلات کے مطابق قابض بھارتی فوجیوں نے بدھ کی شب ضلع پلوامہ میں شبیر اور دیگر دیہاتیوں کو ان کے گھروں سے نکال کر ایک جگہ جمع کرکے تشدد کا نشانہ بنایا تھا جس کے باعث لیکچرار شبیر زخموں کی تاب نہ لاتے ہوئے چل بسے تھے۔

مقبوضہ کشمیر میں حریت پسند رہنما برہان وانی کی شہادت کے بعد سے جاری احتجاجی تحریک میں اب تک 80 سے زیادہ افراد ہلاک ہوچکے ہیں جب کہ پانچ ہزار سے زیادہ افراد زخمی ہوئے ہیں جب کہ پوری وادی کشمیر میں گذشتہ تقریبا 45 روز سے کرفیو نافذ ہے جس سے عام لوگوں کی زندگی بہت مشکل ہوگئی ہے۔

دوسری جانب مقبوضہ کشمیر کی ہائی کورٹ میں مفاد عامہ کی ایک درخواست پر سماعت کے دوران سینٹرل ریزر پولیس فورس کی جانب سے عدالت کو بتایا گیا ہے کہ کشمیر میں گذشتہ 32 روز میں مظاہرین پر قابو پانے کے لیے چھرّوں والے تین ہزار کارتوس استعمال کیے ہیں جن میں تقریباً 13 لاکھ چھرے موجود تھے۔

واضح رہے کشمیر میں گذشتہ چھ ہفتے سے جاری احتجاج کے دوران پیلٹ گن کے چھرّوں سے ہزاروں افراد زخمی ہوئے ہیں جب کہ سینکڑوں نوجوان آنکھوں میں چھرّے لگنے سے وقت بصارت سے محروم ہو گئے ہیں۔

مقبوضہ کشمیر میں نہتے کشمیریوں کے مظاہروں پر قابو پانے کے لیے انڈین حکام نے امر ناتھ یاترا میں شریک ہندو یاتریوں کی حفاظت پر مامور دس ہزار سکیورٹی اہلکاروں کو بھی کشمیر میں تعینات کرنے کا فیصلہ کیا ہے۔

Print Friendly, PDF & Email
20

Comments

comments

اس ویب سائیٹ پر موجود تمام تحریری مواد کے جملہ حقوق@2018 اے آروائی نیوز کے نام محفوظ ہیں

To Top