The news is by your side.

Advertisement

لاہورہائی کورٹ نے مشرف کیس کا فیصلہ رکوانے کیلئے درخواست کو قابل سماعت قرار دے دیا

لاہور : لاہور ہائی کورٹ نے سابق صدر پرویز مشرف کیس کا فیصلہ رکوانے کے لئے درخواست کو قابل سماعت قرار دے دیا، فاضل جج نے وزارت قانون سے خصوصی عدالت کی تشکیل اور سمری کل طلب کرلی، عدالت کا کہنا تھا بد قسمتی سے اس ملک میں ہر چیز میں ڈائنامکس بدلتے ہیں۔

تفصیلات کے مطابق لاہور ہائی کورٹ میں سابق صدر پرویز مشرف کی خصوصی عدالت کے فیصلہ محفوظ کرنے کیخلاف درخواست پر سماعت ہوئی ، جسٹس مظاہر علی اکبر نقوی نے پرویز مشرف کی درخواست پر سماعت کی۔

جسٹس مظاہرعلی اکبر نقوی نے کہا خبرہےاسلام آباد میں بھی کوئی درخواست دائرہوئی ہے، جس پر خواجہ طارق رحیم نے بتایا وزارت داخلہ نےدرخواست اسلام آباد ہائیکورٹ میں دائر کی ہے، تو جسٹس مظاہرعلی اکبر کا کہنا تھا کہ نظرثانی کی درخواست میں آپ درخواست کیوں نہیں دائر کرتے، سپریم کورٹ نےخصوصی عدالت کوہدایات دے رکھی ہیں۔

سابق صدر کے وکیل نے کہا پرویز مشرف جس شہر میں لینڈ کریں گے، پہلے ٹربیونل کے فیصلے کاسامنا کریں گے، ٹربیونل یاخصوصی عدالت خود ہی غیر قانونی ہے، جس پر جسٹسں مظاہر علی اکبرنقوی کا کہنا تھا بد قسمتی سےاس ملک میں ہرچیز میں ڈائنامکس بدلتےہیں۔

خواجہ طارق رحیم ایڈووکیٹ نے کہا ٹربیونل قانون کے مطابق تشکیل نہیں دیا گیا تو جسٹس مظاہرعلی اکبر نے استفسار کیا ساری باتیں ٹھیک ہیں مگریہ عدالت کیسے سماعت کر سکتی ہے؟ بھارتی سپریم کورٹ نے 2017میں اپنے حکم پر نظر ثانی کی ، کیونکہ حکم سےکسی کا بنیادی حق متاثر ہوا تھا۔

مزید پڑھیں : درخواست کی سماعت کیوں کریں؟ مشرف کے وکیل سے مزید دلائل طلب

جسٹس مظاہر علی اکبر کا کہنا تھا کہ قانون مسلسل پڑھنے سےآتا ہےاور روزکی بنیاد پر نئے کیس آتےہیں، کیاپرویز مشرف عدالت کی اجازت سے بیرون ملک گئے ؟ جس پر وکیل نے کہا پرویز مشرف ٹرائل عدالت کی اجازت سے بیرون ملک گئے۔

گذشتہ روز سماعت میں عدالت نے سابق صدرکے وکیل کو درخواست قابل سماعت ہونے پر کل مزید دلائل دینے کی ہدایت کی تھی۔

یاد رہے پرویزمشرف کی جانب سے درخواست میں موقف اختیار کیا گیا تھا کہ خصوصی عدالت نے انیس نومبر کو مؤقف سنے بغیر کیس کا فیصلہ محفوظ کرلیا، وہ بیماری کی وجہ سےبیرون ملک زیر علاج ہیں ، بیماری کی وجہ سے خصوصی عدالت میں اپنا موقف پیش نہیں کرسکا ، لہذا سپریم کورٹ کے فیصلوں کے مطابق کیس کی دوبارہ سماعت شروع کی جائے اور فیصلہ محفوظ کرنے کا حکم معطل کیا جائے۔

fb-share-icon0
Tweet 20

Comments

comments

یہ بھی پڑھیں