The news is by your side.

Advertisement

سی ایس ایس 2018کا امتحان اردو میں لینے کا عدالتی حکم معطل

لاہور : لاہور ہائیکورٹ نے سی ایس ایس 2018کا امتحان اردو میں لینے کا عدالتی حکم معطل کر دیا۔

تفصیلات کے مطابق لاہور ہائیکورٹ کے چیف جسٹس سید منصور علی شاہ کی سربراہی میں دورکنی بنچ نے فیڈرل پبلک سروس کمیشن کی اپیل پر سماعت کی، ایف پی ایس سی کے وکیل نے عدالت کو بتایا کہ ایسے انتظامات ممکن نہیں کہ 2018 میں سی ایس ایس کا امتحان اردو میں لیا جا سکے۔

وکیل نے کہا کہ ایف پی ایس سی نے عدالتی فیصلے کے بعد اردو کے نفاذ پر کام شروع کر دیا ہے تاہم ابھی تک 51 میں سے صرف آٹھ مضامین کا ترجمہ کیا جا سکا باقی 43 مضامین کا ترجمہ ایک سال میں کرنا ممکن نہیں،  اگر مضامین کاترجمہ بروقت نہ کیا جا سکا تو امتحانات کا انعقاد مشکل ہو جائے گا جبکہ وفاقی اداروں کی خالی آسامیاں پر کرنا ممکن نہیں رہے گا۔

جس پر عدالت نے ہائی کورٹ کے سنگل بنچ کا فیصلہ معطل کر دیا اور فریقین کو نوٹس جاری کرتے ہوئے جواب طلب کر لیا ہے۔


مزید پڑھیں : سی ایس ایس کا اگلا امتحان اردو میں لیا جائے، عدالت کا حکم


یاد رہے کہ لاہور ہائیکورٹ کے جسٹس عاطر محمود نے سیف الرحمن ایڈووکیٹ کی درخواست پر فیصلہ سناتے ہوئے فیڈرل پبلک سروس کمیشن کو سال 2018کے امتحانات کا انعقاد اردو میں کرنے کے احکامات جاری کئے تھے اور کہا تھا کہ اردو سرکاری زبان ہے، امتحان سپریم کورٹ کے فیصلے کی رو سے لیا جائے۔

عدالت نے ریمارکس میں کہا تھا کہ سی ایس ایس کا امتحان سپریم کورٹ کے اس فیصلے کی رو سے لیا جائے کہ جس میں سپریم کورٹ نے اردو کو سرکاری زبان نافذ کرنے کا حکم دیا ہے۔

Print Friendly, PDF & Email

Comments

comments

یہ بھی پڑھیں