The news is by your side.

Advertisement

‘عام زندگی لوٹ آئی’، کویت نے بڑااعلان کردیا

کویت سٹی: کرونا وبا کے خلاف جنگ میں کویت نے بڑی کامیابی حاصل کرلی ہے۔

تفصیلات کے مطابق کویت کے وزیر صحت شیخ ڈاکٹر باسل الصباح کا کہنا ہے کہ کویت میں زندگی معمول پر آگئی ہے انہوں نے عوام سے سوال کیا کہ ملک میں ایسی کون سی جگہ ہے جہاں آپ نہیں جا سکتے؟ یا کہاں زندگی معمول پر نہیں آئی ہے؟۔

کویتی وزیر صحت کا کہنا تھا کہ ہم ان چند خوش قسمت ممالک میں سے ایک ہیں جہاں عام زندگی لوٹ آئی ہے، انہوں نے اس بات پر زور دیا کہ ملک میں زندگی ایک بہترین طریقے سے جا رہی ہے اور ویکسی نیشن کا عمل اب بھی ایک بہترین طریقے سے چل رہا ہے اور ہر چیز دستیاب ہے۔

اپنے بیان میں وزیر صحت کا کہنا تھا کہ کرونا وبا کے مکمل خاتمے تک صحت کے تقاضوں کا اطلاق سختی سے جاری رہے گا چاہے اسکولوں ، کمپلیکس یا عبادت گاہوں میں ہوں اور یہ ایک جگہ سے دوسری جگہ مختلف نہیں ہوسکتے۔ انہوں نے مزید کہا کہ کچھ سرگرمیوں میں پابندیاں ہو سکتی ہیں لیکن پہلے کی نسبت نرم ہیں اور متعلقہ وزارت کو اس بارے میں مطلع کیا جاتا ہے کہ ہم صحت کی ضروریات کو اسی طرز پر جاری رکھیں جب تک ہم اس وباء سے مکمل چھٹکارا حاصل نہیں کرلیتے۔

یہ بھی پڑھیں: کوویڈ19: کویتی حکومت نے عوام کو بڑی سہولت دے دی

انہوں نے مزید کہا کہ “ہم دنیا کا حصہ ہیں اور پوری دنیا کو اس سے چھٹکارا حاصل کئے بغیر ہم اس وبا سے چھٹکارا نہیں پاسکتے۔

دوسری جانب وزیر صحت شیخ ڈاکٹر باسل الصباح نے تصدیق کی کہ وزارت پانچ سے بارہ سال کی عمر کے بچوں کے لئے اینٹی کرونا وائرس ویکسی نیشن کی منظوری کی منتظر ہے۔

وزیر صحت نے نشاندہی کی کہ ہماری معلومات کے مطابق بارہ سال سے کم عمر کے بچوں کو ویکسین دینے کے لیے منظوری حاصل کرنے کے لیے ایک درخواست جمع کرائی گئی ہے اور اس منظوری کے بعد ویکسی نیشن جلد شروع ہونے کی توقع ہے اور اس کے لیے ایک منصوبہ موجود ہے۔

موسمی فلو ویکسی نیشن کی فراہمی کے لیے وزارت کی تیاریوں کے بارے میں وزیر صحت نے تصدیق کی کہ ویکسین آنا شروع ہوچکی ہے اور موجودہ دور میں ٹارگٹ گروپس وہ گروپ ہیں جو اینٹی کرونا وائرس کی خوراک وصول کرتے ہیں اور جو فی الحال خوراک کے ساتھ سیزنل فلو ویکسی نیشن حاصل کر سکتے ہیں۔

Comments

یہ بھی پڑھیں