The news is by your side.

Advertisement

بلدیاتی اختیارات کیس، سپریم کورٹ کا تفصیلی فیصلہ جاری

سندھ بلدیاتی اختیارات کیس میں سپریم کورٹ نے تفصیلی فیصلہ جاری کردیا، فیصلے میں بلدیاتی قانون کی شق74اور75 کو آئین سے متصادم قرار دیا گیا۔

اے آر وائی نیوز کے مطابق سپریم کورٹ نے سندھ بلدیاتی اختیارات کیس کا تفصیلی فیصلہ جاری کردیا، 58صفحات پر مشتمل فیصلہ سابق چیف جسٹس گلزاراحمد نےتحریرکیا۔

فیصلے میں کہا گیا ہے کہ آئین تمام قوانین سےبالاتر،اس سےمتصادم ہرقانون غیرآئینی ہوگا جبکہ سندھ بلدیاتی قانون کی شق74 اور75 آئین سےمتصادم ہیں، آئین قانون سازوں کوریاستی اداروں پرلامحدود اختیارات نہیں دیتا، صوابدیدی اختیارات کااستعمال ایماندارانہ،شفاف اندازمیں ہوناچاہیے، سندھ حکومت تمام قوانین کوآرٹیکل140اےکےمطابق تبدیل کرے۔

فیصلے میں مزید لکھا گیا ہے کہ آئین میں دیےگئےحقوق کوکسی قانون کےذریعےختم نہیں کیاجاسکتا،بنیادی انسانی حقوق خلاف ورزی پرمبنی اقدامات غیرقانونی تصورہونگے، گورننس کیلئےمقامی حکومتوں کاخودمختارہونابنیادی چیزہے۔

تفصیلی فیصلے میں کہا گیا ہے کہ آئین کےآرٹیکل140کامقصدمقامی حکومتوں کومکمل بااختیاربناناہے اور آئین مقامی حکومتوں کوسیاسی،مالی اورانتظامی ذمہ داریاں دیتاہے، آئین کےآرٹیکل140اےپرعملدرآمدمیں اگرمگرکی گنجائش نہیں ہے، آئین کےتحت ہرصوبہ بلدیاتی حکومتوں کےقیام کاپابندہے۔

عدالت کا کہنا تھا کہ قانون میں سندھ حکومت کےپاس بلدیاتی اداروں کاکنٹرول سنبھالنے کےاختیارات تھے، ممکن تھا صوبائی حکومت ایک کے بعد تمام اداروں کا کنٹرول سنبھال لے۔

تفصیلی فیصلے میں یہ بھی لکھا گیا ہے کہ دنیامیں کئی مقامی حکومتیں اعلیٰ انتظامی اداروں سے بھی زیادہ بااختیار ہیں، کیونکہ بااختیار بلدیاتی حکومتوں کا معاشی ترقی میں اہم کردار ہوتا ہے، جمہوریت میں مقامی حکومتوں کا کردار کلیدی نوعیت کا ہوتا ہے، مقامی حکومتیں تعلیم، صحت اور امن وامان کی ذمے دار ہوتی ہیں، مقامی حکومت کیلیے عوام کی براہ راست منتخب اسمبلی کا ہونا ضروری ہے۔

فیصلے میں واضح کہا گیا ہے کہ مقامی حکومتوں پر انتظامی کنٹرول رکھنا شہریوں کے حقوق کی کھلی توہین ہے۔

مزید پڑھیں: سندھ میں بلدیاتی اختیارات کیس : سپریم کورٹ نے ایم کیو ایم کی درخواست پر فیصلہ سنادیا

واضح رہے کہ سپریم کورٹ نے گزشتہ ماہ یکم فروری کو سندھ میں بلدیاتی اختیارات کیس میں ایم کیو ایم کی درخواست پر فیصلہ سنایا تھا۔

Comments

یہ بھی پڑھیں