The news is by your side.

Advertisement

لاک ڈاﺅن کا مطلب سڑکیں بند کرنا نہیں تھا،چوہدری سرور

اسلام آباد : تحریک انصاف کے رہنما چوہدری سرور کا کہناہےکہ اسلام آباد لاک ڈاؤن کا مطلب سڑکیں بندکرنا نہیں تھا۔

تفصیلات کےمطابق پولیس اور ایف سی کے دستوں نے چودھری سرور،عمران اسماعیل اور عثمان ڈار کو بنی گالہ میں داخل ہونے سے روک دیا۔

چودھری سرور نے بنی گالہ کے باہر میڈیا سے گفتگو کرتے ہوئے کہا کہ لاک ڈاﺅ ن کا مطلب اسلام آباد یا سڑکیں بند کرنا نہیں ہے تاہم گرفتاریوں سے ہمارے حوصلے پست نہیں ہونگے اور نہ ہی کسی دباﺅ میں آئیں گے ۔

تحریک انصاف کے رہنما کامزید کہنا تھا کہ کارکنوں کی گرفتاریاں غیر قانونی ہیں،ہم قانون کو نہیں توڑنا چاہتے تاہم ہمارے کارکنوں کو فوی رہا کیا جائے۔

چودھری سرور نے کہا کہ زندگی کے چالیس برس قانون کی حکمرانی کےلیے جدوجہد کی ہے، مارے کارکنوں کے پاس اسلحہ یا ڈنڈے نہیں ہیں مگر اس کے باوجود راستے ایسے بلا ک کیے گئے ہیں جیسے ملک میں کوئی قانون نہیں ہے۔

بعدازاں تحریک انصاف کے رہنما جہانگیر ترین کا بنی گالہ میں میڈیا سے گفتگوکرتے ہوئے کہناتھاکہ قیادت کی ہدایت پر کارکنوں اور انتظامات کے جائزے کے لیے آیاہوں،شکایت آرہی ہے چائے نہیں ملی،بندوبست کر رہے ہیں چائے شام تک مل جائےگی۔

جہانگیر ترین کا کہناتھاکہ کارکنوں کو بنی گالہ آنے سے کیوں روکا جارہاہے ہم لڑ کر کھانا لے کر آئے ہیں۔انہوں نے کہا کہ 1000آدمی کی وجہ سے حکمران خوفزدہ ہیں اگر 10لاکھ افراد آئیں گے تو کیا حال ہوگا۔

ان کا مزید کہناتھا کہ پشاور سے آنے والے روڈ بند کیے جارہے ہیں، کارکنوں کی گرفتاریاں کی جارہی ہیں جبکہ ایک صوبے کو بند کیا جارہاہے۔

مزید پڑھیں: کارکن گرفتار ہونے سے بچیں، عمران خان

واضح رہے کہ تحریک انصاف کے سربراہ عمران خان نے صبح کارکنوں سے ملاقات کی اور انہیں 2 نومبر کے لیے تیار رہنے اور گرفتاریوں سے بچنے کی ہدایت کی تھی۔

Comments

comments

یہ بھی پڑھیں