The news is by your side.

Advertisement

عبداللہ حوالگی کیس : عدالت کا ننھے عبداللہ کو نانی کے حوالے کرنے کا حکم

کراچی: مقامی عدالت نے ایدھی ہوم میں موجود مقتولہ حلیمہ کے بیٹے عبداللہ کو نانی کے حوالے کرتے ہوئے کہا ہے کہ بچے کے باپ کو بیٹے سے ملاقات کرنے کا اختیار حاصل ہوگا۔

abdullah-1
تفصیلات کے مطابق عبداللہ کے ماموں اور نانی کی جانب سے بچے کی حوالگی کے لئے فیملی کورٹ میں دائر درخواست کی سماعت ہوئی، دوران سماعت فریقین کے دلائل سننے کے بعد عدالت نے ننھے عبداللہ کو نانی کے حوالے کرنے کا حکم جاری کیا، عدالت نے حکم دیا کہ عبداللہ کے حوالے سے کسی بھی غیر ذمہ داری اور غفلت کی اطلاعات نہیں ملنی چاہئے جبکہ بچے کے والد چوہدری اقبال جب چاہے اپنے بیٹے سے مل سکتے ہیں۔

فیصلے کے بعد ننھے عبد اللہ والد چوہدری اقبال کا کہنا تھا کہ انھیں کوئی اعتراض نہیں ،عبداللہ نانی کے پاس رہے۔

مزید پڑھیں :  دو دریا سے ملنے والے بچے کے حوالے سے کہانی کا نیا رخ سامنے آگیا

اس سے قبل بچے کے والد چوہدری اقبال نے متعدد بار بچے کو اپنے حوالے کرنے کے لئے درخواست بھی دائر کی تھی تاہم عدالت نے کیس کا فیصلہ ہونے تک بچے کی دیکھ بھال ایدھی فاؤنڈیشن کے سپرد کی تھی۔

یاد رہے کہ رواں برس مئی میں رضوان ایاز نامی شخص ایک چھوٹے بچے عبداللہ کو ایدھی سینٹر چھوڑ گیا تھا اور کہا کہ اس کو یہ بچہ دو دریا سے ملا ہے اس کے والدین گم ہوگئے ہیں جسے ایدھی فاؤنڈیشن نے مسنگ چائلڈ کے طور پر اپنے پاس رکھ لیا اور اس کے والدین کی تلاش شروع کردی۔

رضوان وہی شخص تھا، جس نے عبداللہ اورا س کی والدہ کو دہلی کالونی میں ناصر منزل میں دوسری منزل پر فلیٹ کرائے پر دلوایا ،کرائے نامہ میں بھی رضوان نے اپنا اوورسیز والا شناختی کارڈ لکھوایا جبکہ رضوان نے ایدھی سینٹر میں غلط بیانی سے کام لیا کہ بچہ اس کو دو دریا سے ملا ہے۔

مزید پڑھیں: عبداللہ کیس : مرکزی ملزم رضوان سپرہائی کے قریب سے گرفتار

بعد ازاں اکتیس مئی کو دہلی کالونی کی گلی نمبر چار میں گھر سے ایک خاتون کی لاش ملی تھی، جیسے عبداللہ کی والدہ حلیمہ کے نام سے شناخت کیا گیا تھا، جس کے بعد رضوان کو کیس کا مرکزی ملزم قرار دے کر گرفتار کرلیا گیا تھا اور اب تک اس کیس کی تحقیقات جاری ہیں۔

abdullah

عبداللہ کے ایدھی سینٹر میں موجودگی کی خبریں میڈیا پر نشر ہونے کے بعد عبدللہ کے والد اور سوتیلا بھائی اسے لینے کے لیے کراچی پہنچ گئے لیکن انتظامیہ نے بچہ دینے سے انکارکرتے ہوئے کہا ہے کہ بچے کو عدالت سے ذریعے حاصل کرنا ہوگا۔

مزید پڑھیں : عبداللہ کے والد اور بھائی پہنچ گئے،ایدھی سینٹر کا بچہ دینے سے انکار

بلقیس ایدھی نے صحافیوں کو بتایا کہ ننھے عبداللہ کی خالہ نے اس بات کا خدشہ ظاہر کیا ہے کہ اگر بچے کو والد کے حوالے کیا گیا تو وہ اس کو جان سے مار ڈالے گا جبکہ عبد اللہ  کی نانی اور خالہ نے بھی ان سے رابطہ کیا تھا۔

مزید پڑھیں :  معصوم عبداللہ اپنے باپ چوہدری اقبال کو نہ پہچان سکا

چوہدری اقبال اور ان کے بیٹے انصار چوہدری نے ایدھی سینٹر میں میڈیا کے سامنے 4 سالہ عبداللہ سے محبت ظاہر کرنے کی بھی کوشش کی تھی تاہم بچے نے ان کے جذبات کا جواب مثبت انداز میں نہیں دیا اور رونا شروع کردیا۔

 

 

Print Friendly, PDF & Email

Comments

comments

یہ بھی پڑھیں