The news is by your side.

Advertisement

خواتین ووٹرز کا کم ٹرن آؤٹ، قومی اسمبلی کے دو حلقوں‌ کا نتیجہ معطل ہونے کا خدشہ

اسلام آباد: خواتین  ووٹرز کا ٹرن آؤٹ کم ہونے کے باعث قومی اسمبلی کے دو حلقوں‌ کا نتیجہ معطل ہوسکتا ہے.

تفصیلات کے مطابق 25 جولائی کو منعقدہ عام انتخابات کے دو حلقوں کے نتائج پر معطلی کی تلوار لٹکنے لگی۔

وہ حلقے جہاں خواتین کی ووٹنگ کی شرح انتہائی کم رہی، ان میں این اے 10 شانگلہ اوراین اے 48شمالی وزیرستان  شامل ہیں۔

دونوں حلقوں میں خواتین کے درکار 10 فی صدووٹ پول نہیں ہوئے، این اے 10سے ن لیگ کےعباداللہ اور این اے 48 سےمحسن داوڑ جیتے ہیں۔

واضح رہے کہ الیکشن کمیشن نے اعلان کیا تھا کہ خواتین کے 10 فی صد سے کم ووٹ والے حلقے کا نتیجہ معطل ہوگا۔

الیکشن کمیشن نے کہا تھا کہ ایسے حلقوں کی مکمل رپورٹ آنے پر نتائج کی معطلی کااعلان ہوگا اور انتخابی حلقے کے متعلقہ پولنگ اسٹیشنزپر دوبارہ پولنگ ہوگی۔

الیکشن کمیشن ذرایع کے مطابق حتمی نتائج آنے کےبعد ایسے مزید حلقوں کی نشان دہی بھی متوقع ہے۔

یاد رہے کہ آج فافن نے اپنی رپورٹ جاری کی، جس کے مطابق ووٹرز ٹرن آؤٹ مجموعی طور پر 53 فیصد سے زائد رہا۔ خواتین ووٹرز کا ٹرن آؤٹ ماضی کے مقابلے میں زیادہ رہا۔

البتہ چند حلقوں میں ٹرن آؤٹ انتہائی کم رہا، جس کے باعث  نتائج معطل ہونے کا خدشہ ظاہر کیا جارہا ہے۔


خواتین ووٹرز کی تعداد 10 فیصد لازمی قرار، ورنہ نتائج کالعدم ہوں گے، ای سی پی


خبر کے بارے میں اپنی رائے کا اظہار کمنٹس میں کریں‘ مذکورہ معلومات کو زیادہ سے زیادہ لوگوں تک پہنچانے کے لیے سوشل میڈیا پر شیئر کریں۔

Comments

comments

یہ بھی پڑھیں