The news is by your side.

Advertisement

یوکرین کیخلاف اہم ملک روس کا ساتھ دینے کو تیار

روس کے اہم اتحادی بیلاروس کے صدر نے اعلان کیا ہے کہ ضرورت پڑنے پر ان کا ملک یوکرین کے خلاف آپریشن میں حصہ لے گا۔

بین الاقوامی میڈیا رپورٹس کے مطابق بیلاروسی صدر لوکاشینکو نے کہا ہے کہ روسی صدر ولادی میرپیوٹن نے وعدہ کیا ہے کہ وہ بیلاروس پر حملے کو روس پر حملہ تصور کریں گے۔

بیلاروسی صدر لوکاشینکو نے کہا کہ روسی صدر نے انہیں یقین دہانی کروائی ہے کہ اگر بیلاروسی سرحدی علاقوں کی جانب کوئی پیش قدمی ہوئی یا حملہ ہوا تو اسے روس پر حملہ تصور کیا جائے گا۔

Belarusian President Alexander Lukashenko Sergei Guneyev/POOL/TASS

صدر لوکاشینکو نے واضح کیا کہ فی الحال یوکرین پر روسی حملے میں ان کا ملک شامل نہیں تاہم ضرورت پڑنے پر یوکرین کے خلاف آپریشن میں حصہ لیں گے۔

روسی صدر ولادیمیر پوتن کے اتحادی لوکاشینکو نے کہا کہ ہماری مسلح افواج اس آپریشن میں حصہ نہیں لے رہی ہیں۔

ماسکو نے بیلاروس میں ہزار فوجی تعینات کر رکھے ہیں جہاں اس نے فوجی مشقیں کی ہیں۔ بیلاروس کی مغربی سرحد یورپی ممالک سے ملتی ہیں اور اطلاعات ہیں کہ پولینڈ نے بیلاروسی سرحد کے قریب افواج کو جمع کرنا شروع کر دیا ہے۔

Comments

یہ بھی پڑھیں