The news is by your side.

Advertisement

کرونا دوا سے متعلق حکومت کا بڑا فیصلہ

اسلام آباد : فیڈرل بورڈ آف ریونیو نے کرونا وائرس کے لیے استعمال ہونے والی ریمڈیسیور کے انجیکشن یا دوا کی درآمد کو کسٹم ڈیوٹی اور ود ہولڈنگ ٹیکس سے مستثنیٰ قرار دے دیا۔

تفصیلات کے مطابق ایف بی آر نے کو وڈ 19 کے لیے استعمال ہونے والی ریمڈیسیور 100 ایم جی کے انجیکشن یا دوا کی درآمد کو کسٹم ڈیوٹی، اضافی کسٹم ڈیوٹی اور ود ہولڈنگ ٹیکس سے مستثنیٰ قرار دے دیا۔

ایف بی آر کی جانب سے کیے گئے فیصلے کا نفاذ ایس آر او 557 اور ایس آر او 558 کے نام سے جاری دو نوٹیفکیشن کے ذریعے کیا گیا۔

اس کے علاوہ ایک اور ایس آر او 556 کے ذریعے فیڈرل بورڈ آف ریونیو نے رواں سال 30 ستمبر تک کرونا کے لیے استعمال ہونے والی 61 طبی اور ٹیسٹنگ سامان کی درآمد کو کسٹم ڈیوٹی، اضافی کسٹم ڈیوٹی اور ریگولیٹری ڈیوٹی سے مستثنیٰ قرار دیا ہے۔

حکومت پاکستان کی جانب سے ایس آر او 555 کے ذریعے ان 61 اشیا کی درآمد اور سپلائی پر سیلز ٹیکس کی چھوٹ میں توسیع کی گئی ہے۔

واضح رہے کہ رواں سال اپریل میں امریکی فوڈ اینڈ ڈرگ ایڈمنسٹریشن (ایف ڈی اے) نے ریمڈیسیور نامی دوا کو کرونا وائرس کے مریضوں کےعلاج کے لیے استعمال کرنے کی منظوری دی تھی۔

بعدازاں 6 مئی کو امریکی دوا ساز کمپنی گیلیڈ سائنسز کا کہنا تھا کہ وہ کرونا وائرس کے مریضوں پر بہتر نتائج فراہم کرنے والی دوا ریمڈیسیور کی پیداوار شروع کرنے کے لیے پاکستان اور بھارت میں ادویات ساز کمپنیوں کے ساتھ بات چیت کر رہی ہے۔

پاکستانی کمپنی فیروز سننز لیبارٹریز نے رواں برس 13مئی کو اعلان کیا تھا کہ ان کی ذیلی کمپنی بی ایف بائیو سائنسز لمیٹڈ کا کرونا کے خلاف بہتر نتائج دینے والی دوا ریمڈیسیور کی تیاری اور اسے پاکستان سمیت 127 ممالک کو فروخت کرنے کے لیے امریکی کمپنی گیلیڈ سائنسز انکارپوریشن کے ساتھ لائسنس معاہدہ ہوگیا۔

Comments

یہ بھی پڑھیں