site
stats
پاکستان

ملک میں نئے صوبے بننے چاہئیں، سابق صدر پرویز مشرف

کراچی : سابق صدر پرویز مشرف نے کہا ہے کہ ملک میں نئے صوبے بننے چاہئیں، ان کا کہنا تھا ملک کو اور نظام کو تبدیلی کی ضرورت ہے۔

سابق صدرپرویزمشرف نے اے آر وائی نیوز کے پروگرام’سوال یہ ہے‘میں خصوصی گفتگو کرتے ہوئے کہا کہ 2013ءکے الیکشن میں دھاندلی ہوئی عدلیہ کو انتخابات کالعدم قرار دینے چاہیے۔معیشت کے بارے میں غلط معلومات دیکر عوام کو خوش کرنے کی کوشش کی جارہی ہے،جب تک تیسری طاقت نہیں بنتی ملک کی صورتحال ٹھیک نہیںہوسکتی،اس وقت ملک کے نظام اور حکومت میں تبدیلی چاہیے۔

پرویز مشرف کا کہنا تھا کہ ملک میں کوئی ترقیاتی منصوبہ نہیں،قرض پہ قرض لیا جارہاہے۔ملک میں نئے صوبے بننے چاہیئں اٹھارویں ترمیم نے ملک کو کمزور کیا ہے۔

انہوں نے کہا سابق چیف جسٹس نے زندگی میں پہلی بار عقل کی بات کی ہے تاہم جب تک چیک اینڈ بیلنس نہیں آتا کوئی بھی نظام کامیاب نہیں ہوسکتا۔

سابق صدر کا کہنا تھا کہ پاکستان کو روس اور ترکی کے درمیان کشیدگی اور شام میں قیام امن کیلئے اپنا کردار ادا کرنا چاہیے۔امریکہ کے ساتھ تعلقات میں انڈین فیکٹر کو بھی دیکھنا چاہیے۔شوسینا کو اقوام متحدہ دہشت گرد قرار دے۔

Print Friendly, PDF & Email
20

Comments

comments

اس ویب سائیٹ پر موجود تمام تحریری مواد کے جملہ حقوق@2018 اے آروائی نیوز کے نام محفوظ ہیں

To Top