ملک دشمن ’پی ٹی ایم‘ کو بے نقاب کرنے والا ’ملک متورکئی‘ قتل -
The news is by your side.

Advertisement

ملک دشمن ’پی ٹی ایم‘ کو بے نقاب کرنے والا ’ملک متورکئی‘ قتل

میرانشاہ: ملک دشمن تنظیم ’پی ٹی ایم‘ کی ملک دشمن سازش کو بےنقاب کرنے والے’ملک متورکئی‘کو ٹارگٹ کلنگ میں موت کی نیندسلا دیاگیا، مقتول نے حلفیہ بیان دیا تھا کہ خیسور میں فوج کے چھاپے کے دوران بدسلوکی کا کوئی واقعہ نہیں ہوا تھا۔

تفصیلات کے مطابق پی ٹی ایم کی جانب سے پاک فوج کے افسران پر خواتین سے بدسلوکی الزامات پر جرگے کے سامنے حلفیہ طور پر ان الزامات کرنے والے ملک متورکئی کو قتل کردیا گیا ہے، ماتوڑکے نے اپنے بیان میں کہا تھا کہ چھاپے کے وقت وہ فوج کے ہمراہ تھا اور ایسا کوئی واقعہ پیش نہیں آیا تھا، جیسا کہ پی ٹی ایم کی جانب سے بیان کیا جارہا ہے۔

متورکئی نے جرگےکوبتایا تھا کہ خیسورمیں شریعت اللہ کے گھر پر چھاپے کے دوران خواتین کے احترام کا پورا خیال رکھا گیا، مقتول مطابق چھاپے کےوقت وہ سیکورٹی فورسزکےہمراہ تھااوراس نےخود خواتین کوپردےکے لیے کہا تھا، جس کےبعد سیکورٹی فورسز نے کارروائی کی سیکورٹی فورسز نے چوبیس اکتوبر کو شریعت اللہ کے گھر پیٹرولیم کمپنی کے ملازم کو بازیاب کرانےکے لیے کارروائی کی تھی ۔

یاد رہے کہ ملزم شریعت اللہ نےاغوا کے بعد زاہد اللہ کو اپنےگھرمیں قیدکررکھاتھا ،جسے بعد میں شمالی وزیرستان منتقل کردیا گیا۔18جنوری کوپی ٹی ایم کاکارندہ نورالاسلام ، شریعت اللہ کےگھر پہنچااوراس کےچھوٹےبھائی کوسیکورٹی فورسزکےخلاف ورغلایا جس پرحیات اللہ نےسیکورٹی فورسز کےخلاف جھوٹاویڈیوپیغام دیا۔حیات اللہ کےویڈیو پیغام کےدو دن بعد پی ٹی ایم نےفوج کے خلاف جھوٹامظاہرہ بھی کروایا ۔

حیات اللہ کےبیان کےبعدحیات اللہ کےبھائی عرفان اللہ سےرابطہ کیا گیا،دوماموؤں اورعلاقہ کےلوگوں سےمعلومات حاصل کی گئی ۔دہشت گرد خاندان سےمشران اورقریبی رشتہ داروں کےذریعہ رابطے کیےگے۔ رابطہ کرنے پر حیات اللہ کی والدہ نے تمام الزامات مسترد کردئے ، جس کے بعد سچائی جاننے کے لیے اس کےوالدجلات خان کوعثمان زئی جرگہ کےحوالہ کیاگیا تھا۔

چھبیس جنوری کوگرینڈجرگہ میں سوشل میڈیاپرلگائےگئےالزمات کی تردیداورغیرمقامی کارندوں کےخلاف تحقیقات کا فیصلہ کیا گیا، دو فروری کو اکسٹھ مشران کے میرانشاہ میں ہونےوالے جرگے میں مقامی انتظامیہ بھی شریک ہوئی تھی ۔

جرگہ ارکان اور پاک فوج کے جی او سی حقائق جاننے کے لیے حیات اللہ کے گھر گئے،اس اقدام کا مقصد حیات اللہ کے گھر سے مغوی زاہد اللہ کو بازیاب کرانا تھا ،دہشت گرد بیٹے کی گرفتاری اور مغوی کی بازیابی کے لیے جلات خان کو جرگے کے حوالے کیا گیا تھا۔

Comments

comments

یہ بھی پڑھیں