The news is by your side.

Advertisement

دبئی : 64 ہزار درہم کے عوض جعلی ویزہ کی فراہمی، پاکستانی برنس مین پر فرد جرم عائد

ابوظبی : اماراتی عدالت نے بھارتی شہری کو جعلی ورک ویزہ فراہم کرنے  اور دھوکے سے 64 ہزار درہم وصول کرنے  الزام میں بزنس مین پر  فرد جرم عائد کردی۔

تفصیلات کے مطابق متحدہ عرب امارات کی ریاست دبئی کی پولیس نے پاکستانی کاروباری شخصیت کو بھاری رقم کے عوض ورک ویزہ فراہم کرنے کا دعویٰ کرنے والے بزنس مین کو گرفتار جعلی ویزہ فراہم کرنے کے جرم میں گرفتار کرکے عدالت میں پیش کردیا۔

اماراتی خبر رساں ادارے کا کہنا تھا کہ ملزم نے داخلے کا اجازت اور لیبر کنڑیکٹ کے نام پر متاثرہ بھارتی شہری سے مبینہ طور پر 64 ہزار درہم وصول کیے تھے۔

پولیس نے عدالت کو بتایا کہ 25 سالہ پاکستانی بزنس مین نے متاثرہ شخص کو مئی 2018 میں ملازمتی ویزہ دلوایا تھا اور لیبر کنٹریکٹ اور داخلہ پرمٹ کی نقول بھی فراہم کی تھی تاہم وہ تمام کاغذات جعلی تھے۔

پبلک پراسیکیوشن کی تحقیقات کے دوران شکایت کنندہ 28 سالہ انجینئر نے بتایا کہ ’میں گزشتہ برس ایک سیاحتی ایجنسی میں اپنے دوستوں کےلیے ویزے کی فراہمی کےلیے گیا جہاں میری ملاقات مذکورہ بزنس مین سے ہوئی‘۔

متاثرہ شخص نے بتایا کہ ’ملزم نے مجھے ویزہ دلوانے کی یقین دہانی کروائی اور ایک ویزہ کی فیس 7 ہزار درہم مقرر کی تھی جس کے بعد میں نے 7 ہزار درہم بیانہ اور 57 ہزار درہم بعد میں فراہم کیے‘۔

پاکستانی بزنس مین نے متاثرہ شخص کو چھ ویزہ فراہ کیے جو میں نے بھارت اپنے دوستوں کو ارسال کردئیے تاہم جب وہ دبئی پہنچے تو علم ہوا کہ ویزہ جعلی ہے، جس کے بعد میں نے پولیس اسٹیشن میں شکایت درج کروا دی ۔

بھارتی شہری نے عدالت کو تبایا کہ ملزم نے لیبر کنٹریکٹ دیتے ہوئے دعویٰ کیا کہ یہ ویزہ اور اور لیبر کنٹریکٹ وزارت ایچ آر کی جانب سے فراہم کی گئی ہے۔

اماراتی عدالت نے پولیس اور پراسیکیوٹر کے بیان قلمبند کرنے کے بعد ملزم پر دھوکا دہی اور جعلی ویزہ فراہم کرنے کے الزام میں فرد جرم عائد کرتے ہوئے کیس کی سماعت 26 فروری تک ملتوی کردی۔

Comments

comments

یہ بھی پڑھیں