The news is by your side.

Advertisement

مروہ زیادتی و قتل کیس منطقی انجام کے مرحلے میں داخل

کراچی : مروہ زیادتی و قتل کیس منطقی انجام کے مرحلےمیں داخل ہوگیا، گرفتار ملزمان عبداللہ اور فیضو کے فنگر پرنٹس میچ کرگئے، ڈی این کی رپورٹس ملتے ہی گرفتاری ظاہرکردی جائے گی۔

تفصیلات کے مطابق مروہ زیادتی قتل کیس میں اہم پیشرفت سامنے آئی ، گرفتارملزمان کے فنگر پرنٹس میچ کرگئے، جس کے بعد پولیس صرف ڈی این اے رپورٹس کا انتظار ہے۔

ذرائع کا کہنا ہے کہ پولیس کو عبداللہ اورفیضو کےفنگر پرنٹس میچنگ رپورٹ موصول ہوگئی، مروہ کے کپڑوں اور فیضو کے گھر کے بیڈ سے سیمپلز لیے گئے تھے، دونوں جگہوں سے لیے گئے سیمپلز میچ کرگئے، ذ جبکہ دونوں ملزمان پہلے ہی اعتراف جرم کر چکے ہیں۔

ذرائع کے مطابق پولیس حکام کو صرف ڈی این اے رپورٹس کا انتظار ہے، ڈی این اے رپورٹس ملتے ہی پریس کانفرنس میں گرفتاری ظاہرکی جائے گی ، مروہ کے والدین بھی پولیس کے ہمراہ پریس کانفرنس میں شریک ہوں گے۔

گرفتار ملزم فیضو مروہ کے گھر کے سامنے رہتا اور درزی کا کام کرتا ہے جبکہ دوسرا گرفتار ملزم عبداللہ افغانی ہے اورکچرا چنتا تھا، فیضو مروہ کو اغوا کرکے اپنے گھر کی چھت پر لے گیا تھا، دونوں ملزمان نے وہیں مروہ کو اجتماعی زیادتی کا نشانہ بنایا

پولیس نے دونوں ملزمان کو ٹھوس شواہد کی بنا پر گرفتار کیا تھا، مروہ کی لاش جس کپڑوں میں لپٹی ملی وہ فیضو اپنی دکان سےلایا تھا۔

یاد رہے مروہ زیادتی وقتل کیس میں گرفتار2ملزمان نے بچی سےزیادتی وقتل کا اعتراف کیا تھا ، فیضعرف فیضو نے اعترافی بیان میں کہا تھا کہ میں نے اور میرے ساتھی عبداللہ نےبچی کواغواکیا، اغواکےبعدمروہ کو اپنے گھر لاکرباری باری زیادتی کا نشانہ بنایا، زیادتی کی وجہ سےمروہ کی موت ہوئی، جس کے بعد مروہ کی لاش کو کپڑے میں لپیٹ کرکچراکنڈی میں پھینک دیا۔

Comments

یہ بھی پڑھیں