The news is by your side.

Advertisement

الیکشن کمیشن نے مریم نواز کے خلاف پارٹی عہدہ کیس کا فیصلہ موخر کردیا

اسلام آباد:الیکشن کمیشن آف پاکستان میں زیرسماعت مریم نوازپارٹی عہدہ کیس کا فیصلہ مؤخر کردیا گیا، عوامی عہدہ رکھنے پر ان کے خلاف تحریک انصاف کی رہنما ملیکہ بخاری نے دائر کی تھی۔

تفصیلا ت کے مطابق الیکشن کمیشن آف پاکستان نے کہا ہے کہ مریم نواز کے عہدے سے متعلق سپریم کورٹ کے فیصلے اور آرٹیکل 62،63 کے اطلاق پر مزید معاونت درکار ہے۔

چیف الیکشن کمشنر سردار محمد رضا نے مریم نواز کے مسلم لیگ ن کا عہدہ رکھنے سے متعلق کیس میں وکلاء کو مزید معاونت کی ہدایت کی ہے۔ الیکشن کمیشن نے کیس کی مزید سماعت 3 ستمبر تک مؤخر کردی ہے۔

یاد رہے کہ مریم نواز کو پارٹی عہدے سے ہٹانے کے لیے تحریک انصاف کی رہنما ملیکہ بخاری نے درخواست دائر کی تھی جس میں انہوں نے مؤقف اپنایا تھا کہ مریم کی بطور پارٹی نائب صدر تقرری آئین و قانون سے متصادم ہے، وہ کسی بھی سیاسی و عوامی عہدے کے لیے نااہل ہیں۔

یاد رہے کہ رواں ماہ 9 اگست کو احتساب عدالت نے چوہدری شوگرملز کیس میں سابق وزیر اعظم نواز شریف کی صاحبزادی مریم نوازاور بھتیجے یوسف عباس کو 21 اگست تک جسمانی ریمانڈ پر نیب کے حوالے کیا تھا۔ بعد ازاں 21 اگست کو ان کے ریمانڈ میں مزید توسیع کی گئی تھی۔

خیال رہے کہ نواز شریف کے بیٹے حسن اورحسین نواز بھی چوہدری شوگر ملز میں شیئر ہولڈر ہیں لیکن مریم نواز چوہدری شوگر ملز میں سب سے بڑی شیئر ہولدڑ ہیں، مریم نواز سے سوالنامے میں پوچھا گیا تھا کہ چوہدری شوگر ملزکی سرمایہ کاری کہاں سے آئی، غیرملکی شہریوں کی سرمایہ کاری اور لین دین کی تفصیل بھی بتائیں اور مختلف علاقوں میں خریدی گئی اراضی کی تفصیل بھی فراہم کریں۔

شریف خاندان پر چوہدری شوگرملز میں غیر ملکیوں کے نام پر اربوں کی سرمایہ کاری اور لاکھوں کےحصص دینے کا الزام ہے، غیر ملکیوں کے نام پر حصص متعدد مرتبہ مریم نواز، حسین نواز اور نواز شریف کو بغیر کسی ادائیگی واپس کیے گئے جبکہ نیب نے دعویٰ کیا ہے کہ مریم نوازاورچوہدری شوگر ملز کےدوسرے مالکوں کی لاکھوں روپے کی ٹی ٹیزکا سراغ لگایا گیا ہے۔

Comments

comments

یہ بھی پڑھیں