روشن مستقبل کو بے رحمی سے قتل کردیا گیا، اہل خانہ Mashal Khan
The news is by your side.

Advertisement

روشن مستقبل کو بے رحمی سے قتل کردیا گیا، اہل خانہ

صوابی: ولی خان یونیورسٹی میں ساتھی طلباء کے تشدد سے جاں بحق ہونے والے مشعال ملک کی والدہ نے کہا ہے کہ میرے بیٹے کو بے رحمی سے قتل کیا گیا، اُس کے چہرے کو مسخ کیا گیا، حکومت قاتلوں کو گرفتار کرے۔

تفصیلات کے مطابق دو روز قبل ولی خان یونیورسٹی میں شعبہ ابلاغ کی تعلیم حاصل کرنے والے صوابی کے نوجوان کو ساتھیوں نے توہین رسالت کا الزام دے کر  شدید تشدد کا نشانہ بنایا جس کے نتیجے میں نوجوان دم توڑ گیا تھا۔

مشعال خان پر ہونے والے تشدد کی ویڈیوز اور تصاویر سوشل میڈیا پر وائرل ہوئیں تو لوگوں نے اس قتل کی مذمت کی، وزیراعلیٰ خیبرپختونخوا نے اس واقعے کو المناک سانحہ قرار دیتے ہوئے جوڈیشل انکوائری کا حکم دیا۔

پڑھیں: ’’ مردان میں طالب علم قتل،8 ملزمان گرفتار ‘‘

ویڈیو دیکھیں:

اے آر وائی نیوز سے خصوصی گفتگو کرتے ہوئے مشعال کی والدہ نے کہا کہ ہم سب کو ایک دن دنیا سے جانا ہے مگر میرے بیٹے کو بے رحمی سے قتل کیا گیا اُس کے چہرے کو مسخ کیا اور تشدد سے جسم کی ہڈیاں اور انگلیاں ٹوٹ گئیں تھیں۔

انہوں نے کہا کہ مشعال کو بے رحمی سے قتل کیا گیا جس کا بہت افسوس ہے، والدہ نے حکومت سے مطالبہ کیا کہ میرے بیٹے کے قاتلوں کو گرفتار کر کے سخت سزا دی جائے۔

مزید پڑھیں: ’’ عبدالولی یونیورسٹی میں بہت ظلم ہوا، پرویز خٹک ‘‘

 مشعال کی بہن نے گفتگو کرتے ہوئے کہا کہ بھائی ہمیشہ حدیثوں کا حوال دے کر تعلیم حاصل کرنے کی اہمیت کو اجاگر کرتا تھا، وہ روشن مستقبل کی نوید تھا جسے بجھا دیا گیا۔

Comments

comments

یہ بھی پڑھیں