The news is by your side.

Advertisement

توہین عدالت کیس: سیاسی رہنما پر فرد جرم عائد کرنے کا فیصلہ

اسلام آباد: سپریم کورٹ نے توہین عدالت کیس میں پاکستان پیپلز پارٹی کے رہنما مسعود الرحمان عباسی پر فرد جرم عائد کرنے کا فیصلہ کیا ہے۔

تفصیلات کے مطابق سپریم کورٹ کے جسٹس عمرعطابندیال کی سربراہی میں چار رکنی لارجر بینچ نے پیپلز پارٹی کے رہنما مسعود الرحمان عباسی کے خلاف عدلیہ کی توہین سے متعلق کیس کی سماعت کی۔

دوران سماعت مسعود الرحمان عباسی نے کہا کہ والدہ کی وفات اور گھریلو جھگڑوں سے پریشان ہوں جس پر جسٹس مظاہر نقوی نے ریمارکس دیئے کہ جو گفتگو آپ نے کی وہ کس کو متاثر کرنے کیلئے تھی؟ ایف آئی اے کھوج لگائے کس کے کہنے پر تقریر کی گئی۔ سوچے سمجھے منصوبے کے بغیر ایسی تقریر ممکن نہیں۔

جسٹس عمر عطا بندیال نے استفسار کیا کہ کیا آپ سے پہلے بھی کسی نے ایسی تقریر کی تھی؟ جسٹس اعجاز الاحسن نے کہا کہ آپ کہہ رہے تھے کہ عدالت بلائے تو اوقات یاد دلاؤں گا، عدالت نے بلا لیا ہے اب ہمیں اوقات دکھائیں۔

یہ بھی پڑھیں: چیف جسٹس کیخلاف غیرمہذب زبان استعمال کرنے پر سیاسی رہنما کو شوکاز نوٹس جاری

جس پر مسعود عباسی نے کہا کہ غریب آدمی ہوں عدالت سے معذرت کرتا ہوں، جسٹس اعجاز الاحسن نے استفسار کیا کہ آپ نے کس بنیاد پر چیف جسٹس کو سیکٹر انچارج کہا؟ چیف جسٹس پر حرام کی کمائی کا الزام کیسے عائد کیا؟۔

مسعود عباسی نے کہا کہ پاؤں پکڑ کر معافی مانگتا ہوں، دو بیویاں اور سات بچے ہیں، اکیلا کمانے والا ہوں، سپریم کورٹ نے آئندہ سماعت پر فرد جرم عائد کرنے کا فیصلہ کرتے ہوئے سماعت غیر معینہ مدت کے لیے ملتوی کردی۔

واضح رہے کہ مسعودالرحمان عباسی حلقہ پی ایس 114 کےجنرل سیکرٹری ہیں۔

Comments

یہ بھی پڑھیں