سانحہ سول اسپتال کوئٹہ کا ماسٹر مائنڈ مارا گیا، سرفراز بگٹی -
The news is by your side.

Advertisement

سانحہ سول اسپتال کوئٹہ کا ماسٹر مائنڈ مارا گیا، سرفراز بگٹی

پشین : وزیرِ داخلہ بلوچستان سرفراز بگٹی نے کہا ہے کہ آٹھ اگست کو وکلاء پر خودکش حملے کے ماسٹر مائنڈ سمیت 5 ملزمان پولیس مقابلے میں مارے گئے ہیں جب کہ ایک زخمی دہشت گرد کو حراست میں لے لیا گیا ہے۔

صوبائی وزیر داخلہ سرفراز بگٹی نے آئی جی بلوچستان پولیس اور سیکرٹری داخلہ کے ہمراہ وزیراعلیٰ سیکرٹریٹ میں پشین میں گزشتہ شب کی گئی کارروائی سے متعلق میڈیا کو بریفنگ دے رہے تھے۔

سرفراز بگٹی کا کہنا تھا کہ دس روز قبل سانحہ آٹھ اگست حملے کے خودکش حملہ آور کی شناخت ہوئی خفیہ اطلاع پر پولیس اور دیگر سیکورٹی اداروں نے پشین کے علاقے حرمز میں کارروائی کی جس کے نتیجے میں پانچوں دہشت گرد مارے گئے جب کہ ایک دہشت گرد کو زخمی حالت میں گرفتار کرلیا گیا ہے۔

 اسی سے متعلق: کوئٹہ سول اسپتال میں دھماکا، 74افراد جاں بحق، 112 زخمی

صوبائی وزیر داخلہ نے بتایا کہ پولیس مقابلے کے درمیان دو پولیس اہلکار شدید زخمی ہو گئے ہیں جنہیں بہترین طبی امداد دی جا رہی ہیں جب کہ زخمی دہشت گردی کو طبی امداد دینے کے بعد تفتیش کے لیے سخت سیکیورٹی حصار میں رکھا گیا ہے جہاں اس سے تفتیش کا عمل جاری ہے۔

صوبائی وزیرداخلہ بلوچستان نے آپریشن کی تفصیلات بتاتے ہوئے کہا کہ دہشت گردوں کے زیر استعمال ایک اسلحہ کی فیکٹری تھی جس سے 40 کلو بارودی مواد‘ خودکش جیکٹس ‘ ایس ایم جی ‘دستی بم دیگر اسلحہ اور تخریبی سامان بھی برآمد کیا گیا ہے۔

انہوں نے کہا کہ مارے گئے ملزمان میں سے تین کی شناخت ہوچکی ہے جو مقامی ہیں ،ملزمان بیرسٹر امان اچکزئی کے قتل سمیت دہشتگردی کے مختلف واقعات میں بھی ملوث تھے،وزیراعلیٰ بلوچستان نے کامیاب کارروائی پر اہلکاروں کے لئے نقد انعام کا اعلان بھی کیا ہے۔

بلوچستان میں داعش کی موجودگی کے حوالے سے پوچھے گئے سوال کا جواب میں انہوں نے بلوچستان میں داعش کی موجودگی کو رد کرتے ہوئے کہا کہ داعش کے نام سے کسی بھی دہشت گردی کی واردات کی ذمہ داریاں قبول کرنا جعلی ہیں کیوں کہ بلوچستان میں این ڈی ایس اور را کارروائی کروارہی ہیں جس کے واثق ثبوت موجود ہیں۔

Comments

comments

یہ بھی پڑھیں