The news is by your side.

Advertisement

مولانا تنویر الحق تھانوی مبینہ دھمکیوں کے بعد سراپا احتجاج

کراچی: متحدہ قومی موؤمنٹ (ایم کیو ایم) پاکستان کے سابق سینیٹر اور جامعہ احتشامیہ کے مہتمم مولانا تنویر الحق تھانوی نے کے ڈی اے افسران کی مبینہ دھمکیوں کے بعد مسجد کے باہر احتجاج شروع کردیا۔

اے آر وائی نیوز کی رپورٹ کے مطابق مولانا تنویر الحق تھانوی نے  کے ڈی اے افسران پر دھمکیاں دینے کا الزام عائد کرتے ہوئے  کہا کہ کچھ افسران مسجد کے احاطے میں قائم دکانیں مسمار کرنے کی دھمکیاں دے رہے ہیں۔

اُن کا کہنا تھا کہ کے ڈی اے افسران نے مجھ سے رابطہ کر کے کہا کہ مسجد کے احاطے میں قائم دکانیں اور جگہ غیر قانونی ہے جسے مسمار کیا جائے گا جبکہ مجھے ابھی تک ادارے کی طرف سے کوئی نوٹس موصول نہیں‌ ہوا۔

مسجد کے باہر مولانا تنویر الحق تھانوی نے احتجاج شروع کیا تو علاقہ مکین، معززین اور نمازیوں کی بڑی تعداد بھی مولانا کے ساتھ احتجاج پر بیٹھ گئی۔

جامعہ احتشامیہ کے مہتمم کا کہنا تھا کہ ’میں یہاں بیٹھا ہوں جس کی جرأت ہے وہ آئے اور مسجد میں داخل ہو کر بتائے ، میں نے کسی کے حق پر ڈاکہ ڈال کر یا بیوہ، یتیم کی جگہ پر قبضہ نہیں کیا بلکہ مسجد اور دکانوں کے لیے جگہ قانونی طور پر حاصل کی‘۔

اُن کا کہنا تھا کہ علاقے کے کچھ لوگ مجھے بلیک میل کرنے کی کوشش کررہے ہیں، اگر کوئی مسئلہ ہے تو کراچی ڈیویلپمنٹ اتھارٹی (کے ڈی اے) کی ٹیم آئے اور بات کرے۔

Comments

یہ بھی پڑھیں