The news is by your side.

Advertisement

بریگزٹ پر تھریسامے کے اپوزیشن لیڈر جیریمی کاربن سے مذاکرات ناکام

لندن : اپوزیشن لیڈر نے وزیراعظم پر سمجھوتہ نہ کرنے کا الزام عائد کردیا، جس کے باعث بریگزٹ کی تاریخ میں توسیع کے امکانات بڑھ گئے۔

تفصیلات کے مطابق برطانوی وزیر اعظم تھریسامے کی یورپی یونین سے برطانوی انخلاء سے متعلق معاملات حل کرنے کےلیے اپوزیشن لیڈر جیریمی کوربن سے ہونے والے مذاکرات ناکام ہوگئے۔

غیر ملکی میڈیا کا کہنا ہے کہ برطانوی قائد حزب اختلاف جریمی کاربن نے وزیر اعظم تھریسامے پر سمجھوتہ نہ کرنے کا الزام عائد کردیا ہے۔

مقامی خبر رساں ادارے کا کہنا ہے کہ یورپی یونین کی جانب سے بریگزٹ کےلیے ایک سال کا وقت دینے کا امکان ہے، اس سے قبل تھریسامے نے بریگزٹ میں توسیع کے لیے یورپین یونین کو خط لکھ دیا تھا۔

میڈیا سے گفتگو کرتے ہوئے اپوزیشن لیڈر جیریمی کاربن نے الزام عائد کیا کہ وزیر اعظم تھریسامے کے ان کے ساتھ سمجھوتہ نہیں کیا ہے،

برطانوی میڈیا کے مطابق یورپی یونین کی جانب سے کہا ہے کہ تھریسامے توسیع کی درخواست کے بجائے متبادل منصوبہ پیش کرے۔

یورپی یونین کونسل کے صدر ڈونلڈ ٹسک کی جانب سے تجویز دی گئی تھی کہ یورپی ممالک کے سربراہان بریگزٹ کی تاریخ میں ایک برس کی لچکدار توسیع کردیں لیکن یورپی ممالک برطانیہ کو مزید وقت دینے کےلیے تیار نہیں۔

یورپی یونین کے رکن ممالک کا کہنا ہے کہ اگر بریگزٹ کی تاریخ میں 30 جون تک توسیع کی گئی تو برطانیہ یورپی یونین کے الیکشن میں اپنا حق رائے دہی بحیثیت رکن ملک استعمال کرسکتا ہے۔

یورپی ممالک کی جانب سے برطانیہ کو عندیہ دیا گیا ہے کہ اگر 12 اپریل تک بریگزٹ معاہدہ منظور ہوگیا تو ٹھیک ورنہ برطانیہ کو بغیر ڈیل کے یورپی یونین سے علیحدہ ہونا پڑے گا۔

Comments

comments

یہ بھی پڑھیں