site
stats
سندھ

کراچی کا اہم مسئلہ دہشت گردی ہے، نعیم الرحمان

اسلام آباد: جماعت اسلامی کے رہنما حافظ نعیم الرحمان کا کہنا تھا کہ ایم کیو ایم کارکردگی دکھائے گی تو اختیارات خود ہی مل جائیں گے، شہر قائد کا اہم مسئلہ مائنس ون نہیں بلکہ مائنس دہشت گردی ہے۔

ان خیالات کا اظہار انہوں نے اسلام آباد میں میڈیا بریفنگ کے دوران کیا۔ حافظ نعیم الرحمان نے کہا کہ کراچی میں جو بھی واقعہ رونما ہو اس سے پورا ملک متاثر ہوتا ہے کیونکہ کراچی پاکستان کی معاشی شہہ رگ ہے۔

انہوں نے کہا کہ افسوس کراچی کے معاملے پر وفاقی حکومت کی عدم توجھی انتہائی افسوس ناک ہے، جو منصوبے اسلام آباد، لاہور اور فیصل آباد میں ہورہے ہیں وه کراچی میں کیوں نہیں بنائے جاتے، انہی مسائل کے باعث کراچی کو ایک بار پھر غیر یقینی صورتحال سے گزرنا پڑ رہا ہے۔


پڑھیں: ’’ کراچی کی ترقی کے لیے وسیم اختر کے ساتھ ہوں، مراد علی شاہ ‘‘


جماعت اسلامی کے رہنما نے کہا کہ کراچی کا مسئلہ مائنس ون سے نہیں بلکہ مائنس دہشت گردی سے حل ہوگا اور اسی پر عملدرآمد کی ضرورت ہے تاہم افسوس ہے کہ ایک بار پھر قاتلوں کو ریلیف فراہم کر کے انہیں جیل سے رہا کیا جارہا ہے۔

حافظ نعیم الرحمان نے مطالبہ کیا کہ ’’شہر قائد کے مجموعی انفراسٹریکچر کے لیے 500 ارب روپے کی گرانٹ دی جائے، کراچی کے مسائل پر وفاقی اور صوبائی حکومتوں کو سنجیدگی کا مظاہرہ کرتے ہوئے بس منصوبوں کے علاوہ بھی ترقیاتی کام کرنے ہوں گے‘‘۔ انہوں نے کہا کہ بھارت کے شہر ممبئی میں زمین کے اندر ٹرین چلائی جاسکتی ہے تو پھر شہر قائد میں کیوں نہیں چل سکتی‘‘۔


مزید پڑھیں: ’’ کراچی کی بہتری کے لیے مل کرکام کریں گے، وسیم اختر و عمران اسماعیل ‘‘


کے الیکٹرک کے مظالم پر تبصرہ کرتے ہوئے جماعت اسلامی کے رہنماء نے کہا کہ ’’کراچی کے باسویں کو بلوں میں اوور بلنگ کے ذریعے برباد کردیا گیا اور کے الیکٹرک کی انتظامیہ غنڈوں کو بھیج کر غریب عوام سے زورزبردستی کی بنیاد پر ریکوریاں کروارہی ہے۔

انہوں نے حکومت کو خبردار کرتے ہوئے کہا کہ حکومت بغیر تصدیق کے لوگوں کے شناختی کارڈ بلاک کررہی ہے اگر مشرقی پاکستان  اور خیبرپختونخواہ سے آئے لوگوں کے شناختی کارڈ بلاک کرنے کا سلسلہ بند نہ کیا گیا تو راست اقدام پر مجبور ہوں گے۔

Print Friendly, PDF & Email
20

Comments

comments

اس ویب سائیٹ پر موجود تمام تحریری مواد کے جملہ حقوق@2018 اے آروائی نیوز کے نام محفوظ ہیں

To Top