The news is by your side.

Advertisement

وزارت صحت نے 2کروڑماسک اسمگل کرنے کے الزامات کو بے بنیاد قرار دے دیا

اسلام آباد : کوروناوائرس ازخودنوٹس کیس میں وزارت صحت نے رپورٹ میں 2کروڑ ماسک اسمگل کرنے کے الزامات کو بے بنیاد قرار دیتے ہوئے کہا ملک میں فیس ماسک کی کمی نہیں ، اپریل کے آخر تک 20ہزار ٹیسٹ کرنے کے اہل ہوجائیں گے۔

تفصیلات کے مطابق کوروناوائرس ازخودنوٹس کیس میں وزارت صحت نے اپنی رپورٹ سپریم کورٹ میں جمع کردی ، جس میں بتایا گیا ہے کہ 2کروڑماسک اسمگل کرنےکےالزامات بےبنیادہیں، 35 لاکھ ماسک چینی حکومت کی درخواست پر 5 چینی کمپنیوں کو ایکسپورٹ کئے، معاملے کی تحقیقات ایف آئی اے کررہا ہے۔

وزارت صحت کی رپورٹ میں کہا گیا کہ ملک میں فیس ماسک کی کمی نہیں ، این آئی ایچ میں کورونا کے مریضوں اور ان کے رابطہ داروں کے ٹیسٹ مفت ہیں۔

رپورٹ میں بتایا گیا کہ ڈریپ کی سفارش پرپروٹوٹائپ وینٹی لیٹرزمقامی سطح پربنانےکی اجازت دی، 100لائسنس ہولڈرز کو300 سینیٹائزر بنانےکی اجازت دی گئی ہے۔

وزارت صحت کا رپورٹ میں کہنا ہے کہ اپریل کے آخر تک 20 ہزار ٹیسٹ کرنے کے اہل ہوجائیں گے، گزشتہ 24گھنٹے میں 6416 ٹیسٹ کئےگئے۔

رپورٹ کے مطابق پی پی ایزکی قیمت مستحکم رکھنےکے لئے 100سے زائد چھاپے مارے گئے، اسپیشل ڈیوٹی کے دوران شہید ڈاکٹرز، طبی عملے کیلئے خصوصی پیکج تیاری کے مراحل میں ہے۔

خیال رہے سپریم کورٹ میں چیف جسٹس کی سربراہی میں پانچ رکنی لارجر بینچ کرونا ازخود نوٹس کیس کی سماعت آج کرے گا، چاروں صوبوں نے اپنی اپنی کارکردگی رپورٹس سپریم کورٹ میں جمع کرادی ہیں جبکہ سندھ حکومت نے آٹھ ارب کے راشن کی تقسیم سے متعلق اپنا جواب سپریم کورٹ میں جمع کرایا۔

گزشتہ سماعت عدالت عظمی نے صوبوں اوروفاق کی کارکردگی پرعدم اطمینان کااظہار کیا تھا، وزیراعظم کے معاون خصوصی ڈاکٹر ظفرمرزا کو ہٹانے کے ریمارکس سامنے آئے تھے، عدالت نے واضح کیاتھا کہ مفادعامہ اورعوام کے حقو ق پرکوئی سمجھوتہ نہیں ہوگا۔

Comments

یہ بھی پڑھیں