site
stats
عالمی خبریں

بنگلہ دیش: جماعت اسلامی کے ایک اور رہنما میر قاسم علی کو پھانسی دیدی گئی

ڈھاکا: بنگلہ دیشی حکومت نے پاکستان سے وفاداری کے جرم میں جماعت اسلام کے ایک اور رہنما میر قاسم کو پھانسی دے دی، حکومت پاکستان نے پھانسی پر اظہار مذمت کرتے ہوئے کہا ہے کہ حزب اختلاف کو ناقص ٹرائل کے ذریعے دبانا غیر جمہوری عمل ہے،بنگلہ دیش 74ء کے سہ فریقی معاہدے کی پاسداری کرے۔

اطلاعات کے مطابق بنگلادیش میں جماعت اسلامی کے ایک اور رہنما میر قاسم علی کو پھانسی دے دی گئی، میر قاسم علی پر 1971ء میں جنگی جرائم کے ارتکاب کا الزام تھا۔

63 سالہ میر قاسم علی کو ڈھاکا کی نزدیکی جیل میں پھانسی دی گئی، منگل کو سپریم کورٹ نے میر قاسم کی سزائے موت کے فیصلے پر نظر ثانی کی درخواست مسترد کر دی تھی، میر قاسم نے صدر سے رحم کی اپیل کرنے سے انکار کر دیا تھا۔

بنگلا دیشی وزیراعظم شیخ حسینہ نے 2010ء میں 1971ء کے جنگی جرائم کی خصوصی عدالت قائم کی تھی جس میں اب تک جماعت اسلامی کے پانچ رہنماؤں سمیت چھ افراد کو پھانسی کی سزا دی جا چکی ہے۔

حکومت پاکستان نے پھانسی پر اظہار مذمت کرتے ہوئے کہا ہے کہ حزب اختلاف کو ناقص ٹرائل کے ذریعے دبانا غیر جمہوری عمل ہے،بنگلہ دیش 74ء کے سہ فریقی معاہدے کی پاسداری کرے۔

پاکستان نے بنگلہ دیش میں جماعت اسلامی کے رہنما میر قاسم کے لواحقین سے اظہار تعزیت کیا ہے اور کہا ہے کہ میر قاسم کی ناقص عدالتی فیصلے کے ذریعے سزائے موت پر دکھ ہے، بنگلہ دیش کو 1974ء کے سہ فریقی معاہدے کا پاس رکھنا چاہئے۔

دفتر خارجہ ترجمان زکریا نفیس نے کہا ہے کہ حزب اختلاف کو ناقص عدالتی ٹرائل کے ذریعے دبانا غیر جمہوری عمل ہے۔

Print Friendly, PDF & Email
20

Comments

comments

اس ویب سائیٹ پر موجود تمام تحریری مواد کے جملہ حقوق@2018 اے آروائی نیوز کے نام محفوظ ہیں

To Top