The news is by your side.

Advertisement

برطانوی حکومت نے موبائل فون کمپنیوں پر نئی پابندی عائد کردی

لندن : برطانیہ کی حکومت نے موبائل نیٹ ورکس کی سروسز پر لاک موبائل فون فروخت کرنے پر پابندی عائد کر دی  ہے، اس حوالے سے ریگولیٹر آف کام کا کہنا ہے کہ آئندہ سال دسمبر سے ایسا کرنے کی اجازت نہیں ہوگی۔

ٹیلی کام سیکٹر کی بڑی کمپنیاں جیسے بی ٹی، ای ای ، ووڈا فون اور ٹیسکو موبائل سبھی ایسے موبائل فون ہینڈسیٹ فروخت کرتی ہیں جو دوسرے نیٹ ورکس پر استعمال نہیں کیے جاسکتے جب تک کہ وہ ان لاک نہ ہوں۔

اس حوالے سے ریگولیٹر آف کام نے تصدیق کی ہے کہ مذکورہ موبائل فون کمپنیوں پر دسمبر 2021 سے لاک ہینڈ سیٹس فروخت کرنے پر پابندی عائد ہوگی۔

ریگولیٹر آف کام نے کہا ہے کہ ان لاک ہینڈ سیٹس میں عموماً پیچیدہ پراسس ہو سکتے ہیں اور یہ ان کے کانٹریکٹس ختم ہونے کے بعد پرووائیڈز سے سوئچنگ کرنے میں اونرز کی حوصلہ شکنی کرتے ہیں، اسمارٹ فون کو ان لاک کروانے پر عموماً 10 پونڈ کی لاگت آتی ہے تاکہ وہ کسی بھی نیٹ ورک پر کام کرسکے۔

غیر ملکی خبر رساں ادارے کے مطابق اس نئی پابندی سے جو کمپنیز متاثر ہوں گی ان میں بی ٹی اور اس کا ای ای موبائل ڈویژن، ووڈا فون اور ٹیکسو موبائل شامل ہیں جبکہ اوٹی سکائی، تھری اور ورجن پہلے ہی صرف ان لاکڈ ہینڈ سیٹس فروخت کر رہی ہیں۔

نیٹ ورکس نے پہلے تجویز دی تھی کہ لاک کی جانے والی ڈیوائسز چوری اور فراڈ کا پتہ لگانے میں مدد دیتی ہیں لیکن واچ ڈاگ نے نوٹ کیا کہ کچھ کمپنیز نے پہلے ہی اس پریکٹس کو چھوڑ دیا ہے۔

آف کام نے یہ بھی اعلان کیا ہے کہ جون 2022 سے ٹیلی کام صارفین سے اپنے معاہدے کی اہم شرائط کا تحریری طور پر معاہدہ کیا جائے گا۔

واچ ڈاگ آف کام کنکٹیوٹی ڈائریکٹر سلینا چڈھا نے بتایا کہ اس سے لوگوں کا پیسہ، وقت اور کوشش کی بچت ہوگی اور انہیں بہتر ان لاک ڈیلز کے مواقع میسر آئیں گے۔

Comments

یہ بھی پڑھیں