ماڈل ٹاؤن انکوائری رپورٹ‘ حکومتی وکیل کے پیش نہ ہونے پر عدالت برہم -
The news is by your side.

Advertisement

ماڈل ٹاؤن انکوائری رپورٹ‘ حکومتی وکیل کے پیش نہ ہونے پر عدالت برہم

لاہور: ہائی کورٹ نے سانحہ ماڈل ٹاؤن انکوائری رپورٹ منظر عام پر لانے کے عدالتی حکم کے خلاف حکومتی اپیل کی سماعت چوبیس اکتوبرتک ملتوی کردی‘ حکومت پنجاب کے وکیل خواجہ حارث آئندہ سماعت پر پیش نہ ہوئے تو اپیل عدم پیروی خارج کر دی جائے گی۔

تفصیلات کے مطابق آج بروز جمعرات لاہور ہائی کورٹ کے جسٹس عابد عزیز شیخ ‘ جسٹس شہباز علی رضوی اور جسٹس قاضی محمد امین نےدرخواستوں پر سماعت کی ۔

باقرنجفی رپورٹ سے فرقہ واریت پھیلنے کا خدشہ ہے، رانا ثناء اللہ

حکومتِ پنجاب کے وکیل خواجہ حارث احتساب عدالت میں مصروفیت کے باعث پیش نہ ہو سکے ‘ ایڈووکیٹ جنرل پنجاب شکیل الرحمن نے عدالت کو آگاہ کیا کہ خواجہ حارث سپریم کورٹ اور احتساب عدالت میں مصروفیت کے باعث پیش نہیں ہو سکتے ۔

عدالت نے ریمارکس دیتے ہوئے کہا کہ یہاں فل بنچ بیٹھا ہے مگر حکومتی وکیل ٹرائل عدالتوں میں پیش ہو رہے ہیں ‘ انہیں اس عدالت میں پیش ہونے کی کوئی پروا نہیں آئندہ سماعت پر خواجہ حارث پیش نہ ہوئے تو ایڈووکیٹ جنرل پنجاب حکومتی وکیل کے طور پر پیش ہوں ۔

معزز عدالت نے یہ بھی کہا کہ حکومتی وکیل کو عدالت کے روبرو پیش کرنا عدلیہ کی ذمہ داری نہیں‘ اگر آئندہ سماعت پر ایڈووکیٹ جنرل پنجاب حکومت کی طرف سے دلائل نہیں دے گے تو اپیل عدم پیروی پر خارج کر دی جائے گی ۔

عدالت نے کیس کی مزید سماعت چوبیس اکتوبر تک ملتوی کر دی۔


اگر آپ کو یہ خبر پسند نہیں آئی تو برائے مہربانی نیچے کمنٹس میں اپنی رائے کا اظہار کریں اور اگر آپ کو یہ مضمون پسند آیا ہے تو اسے اپنی فیس بک وال پر شیئر کریں۔

Comments

comments

یہ بھی پڑھیں