The news is by your side.

Advertisement

سانحہ ماڈل ٹاؤن: عوامی تحریک نے شواہد کے انبار لگادئیے

لاہور: انسدادِ دہشت گردی عدالت میں سانحہ ماڈل ٹاؤن کیس کی سماعت میں عوامی تحریک نےحکومتی ظلم سے متعلق شواہد کے انبار لگا دیے ‘دو گاڑیوں میں بھر کر ثبوت عدالت لائے گئے۔

تفصیلات کے مطابق انسداد ِدہشت گردی عدالت میں ماڈل ٹاؤن استغاثہ کی سماعت شروع ہوئی تو عوامی تحریک کی جانب سے ماڈل ٹاون سانحہ کے متعلق شواہد اور ثبوت پیش کیے۔

ثبوت اتنی بڑی تعداد میں تھے کہ دو گاڑیوں میں لائے گئے ۔ عوامی تحریک کی جانب سے 120 ملزمان کے خلاف شواہد پیش کیے گئے ۔ عدالت میں 90 ہزار دستاویزات ، 800 سی ڈیز اور 7 ہزار تصاویر کے پرنٹ پیش کیے گئے ۔ اتنی بڑی تعداد میں ثبوت دیکھ کر واقعے میں ملوث ملزم پولیس اہلکار بھی ہکا بکا رہ گئے۔

عوامی تحرک کے مطابق ویڈیوز میں پولیس اہلکاروں کی فائرنگ اور تشدد کے تمام تر واقعات موجود ہیں ۔

دوسری جانب ڈی آئی جی رانا عبدالجبار اور ایس پی ڈاکٹر اقبال کی جانب سے حاضری سے استثنیٰ کی درخواست دی گئی جس کی عوامی تحریک کے وکلاء نے مخالفت کرتے ہوئے موقف اختیار کیا کہ مرکزی ملزمان کی ہر پیشی پر حاضری ضروری ہے‘ اس لیے درخواست مسترد کی جائے ۔

عدالت نے وکلاء کو مزید دلائل کے لیے طلب کرتے ہوئے سماعت 23 نومبر تک ملتوی کردی۔


اگر آپ کو یہ خبر پسند نہیں آئی تو برائے مہربانی نیچے کمنٹس میں اپنی رائے کا اظہار کریں اور اگر آپ کو یہ مضمون پسند آیا ہے تو اسے اپنی فیس بک وال پر شیئر کریں۔

Print Friendly, PDF & Email

Comments

comments

یہ بھی پڑھیں