منی لانڈرنگ کیس: آصف زرداری اور فریال تالپور کی ضمانت میں 5 مارچ تک توسیع -
The news is by your side.

Advertisement

منی لانڈرنگ کیس: آصف زرداری اور فریال تالپور کی ضمانت میں 5 مارچ تک توسیع

کراچی: بینکنگ کورٹ نے منی لانڈرنگ کیس میں سابق صدر آصف علی زرداری اور ان کی بہن فریال تالپور کی ضمانت میں 5 مارچ تک توسیع کردی۔

تفصیلات کے مطابق منی لانڈرنگ کیس میں عبوری ضمانت حاصل کرنے والے آصف علی زرداری اور ان کی ہمشیرہ فریال تالپورکراچی کی بینکنگ کورٹ کے سامنے پیش ہوئے۔

عدالت میں سماعت کے دوران وکیل نیب نے کہا کہ چیئرمین نیب کے لیٹر کو عدالت میں پیش کیا جائے گا، ملزمان کی درخواست ضمانتیں نہ سنی جائیں۔

بینکنگ کورٹ نے استفسار کیا کہ سندھ ہائی کورٹ نے ضمانتوں پر کیا فیصلہ کیا ہے؟ جس پر نیب وکیل نے جواب دیا کہ سندھ ہائی کورٹ نے سماعت کل تک ملتوی کی ہے۔

عدالت نے ریمارکس دیے کہ ہائی کورٹ کیس نہیں سن رہی توہم کیسے سن سکتے ہیں؟ وکیل نیب نے بتایا کہ چیئرمین نیب نے کیس اسلام آباد منتقل کرنے کی درخواست پردستخط کردیے۔

ڈاکٹرنے بیان دیا کہ انورمجید کو سرجری کی ضروری ہے، بینکنگ کورٹ نے استفسار کیا کہ یہ بتائیں اب تک سرجری کیوں نہیں ہوئی؟، ڈاکٹر نے جواب دیا کہ ہم طبی سہولتیں دے رہے ہیں۔

بینکنگ کورٹ نے نے حکم دیا کہ انور مجید کو تمام طبی سہولتیں دی جائیں، ملزم کے وکیل منیر بھٹی نے کہا کہ عبدالغنی کوڈاکٹروں نے مکمل آرام کا مشورہ دیا، عبدالغنی مجید کی ضمانت منظور کی جائے۔

منیر بھٹی نے کہا کہ عبدالغنی مجید کا آپریشن نہ ہوا تو بیماری بڑھ جائے گی، ، ڈاکٹرملیرجیل نے بتایا کہ ملزم کو سرجری کی ضرورت ہے۔

ڈاکٹرملیرجیل نے کہا کہ متعدد بارٹیسٹ اور علاج کے لیے جیل سے باہر بھی اسپتال لے گئے جو سہولتیں جیل میں موجود ہیں، وہ دی جا رہی ہیں۔

ایف آئی اے پراسیکیوٹر نے کہا کہ سپریم کورٹ کا فیصلہ پڑھ لیا جائے، سپریم کورٹ فیصلے کے مطابق ملزمان کی درخواست ضمانت سننے کی گنجائش نہیں۔

فاروق ایچ نائیک نے کہا کہ قانون ملزمان کی ضمانتیں سننے پرکوئی قدغن نہیں لگاتا، عدالت نے استفسار کیا کہ تفتیشی افسر عدالت کوبتائے کیس میں کیا پیشرفت ہے؟۔

تفتیشی افسر نے بتایا کہ سپریم کورٹ میں پیش رفت رپورٹ جمع کرا رہے ہیں، کیس اسلام آباد منتقل کیا جا رہا ہے۔

عدالت نے ریمارکس دیے کہ ایف آئی اے کو جو کہنا ہے تحریری طور پرجمع کرائے۔ آصف زرداری اور فریال تالپور کے وکیل فاروق ایچ نائیک نے کہا کہ سپریم کورٹ نے نیب ریفرنسزاسلام آباد منتقلی کا حکم دیا۔

فاروق ایچ نائیک نے کہا کہ سپریم کورٹ فیصلے میں بینکنگ کورٹ کیس کا ذکر نہیں، ایف آئی اے اور نیب فیصلے کی غلط تشریح کر رہے ہیں۔

انہوں نے کہا کہ ایف آئی اے بتائے، حتمی چالان کیوں جمع نہیں کرا رہے؟ عدالت نے ایف آئی اے کے وکیل سے استفسار کیا کہ بتانا ہوگا کیس میں کیا پیش رفت ہو رہی ہے؟۔

تفتیشی افسر نے کہا کہ جو بھی پیشرفت ہو رہی ہے سپریم کورٹ میں دے رہا ہوں، عدالت نے ریمارکس دیے کہ آپ یہ سب زبانی کہہ رہے ہیں تحریری طورپر بتائیں۔

بعدازاں بینکنگ کورٹ نے آصف زرداری، فریال تالپوراور دیگر کی ضمانت میں 5 مارچ تک توسیع کرتے ہوئے انور مجید، اے جی مجید کی درخواست ضمانت کی سماعت 20 فروری تک ملتوی کردی۔

Comments

comments

یہ بھی پڑھیں