The news is by your side.

غیر ملکی این جی اوزکے لئے نئی مانیٹرنگ پالیسی کا اعلان

اسلام آباد: وفاقی وزیرِ داخلہ چوہدری نثارعلی خان نے غیرملکی این جی اوز کے حوالے سے نئی پالیسی کا اعلان کردیا ہے۔

نئی مانیٹرنگ پالیسی کا اعلان آج بروز جمعہ اسلام آباد میں صحافیوں سے گفتگو کرتے ہوئے کیا گیا اور اس موقع پر چوہدری نثار کا کہنا تھا کہ ہمارے ملک میں اداروں اور تنظیموں کو کھلی چھوٹ دے رکھی ہے۔

ان کا کہنا تھا کہ بڑی بڑی این جی اوز پاکستان میں بغیر کسی رجسٹریشن کے کام کررہی ہیں یا اسلام آباد کی سیکیورٹی کلئیرنس لے کر ملک کے دوردراز علاقوں میں کام کررہی ہیں۔

انہوں نے کہا کہ اس سے قبل غیرملکی این جی اوز اس سے قبل وزارت ِ فنانس کے تحت آتی تھیں لیکن اب انہیں براہ راست وزارتِ داخلہ کے زیرانتظام لے لیا گیا ہے۔

چوہدری نثار کا کہنا تھا کہ وزیراعظم کی براہ راست ہدایات پر این جی اورز سے متعلق پالیسی محض تین ماہ میں مرتب کی گئی۔

پالیسی کے بنیادی نکات


چوہدری نثار علی خان نے کہا کہ عالمی این جی اوز سے متعلق تین نکاتی پالیسی تیار کی گئی ہے۔

غیر ملکی این جی اوز حکومت کی جانب سے مقررکردہ دائرہ کارکے اندر اپنی حدود میں کام کریں گی اورمحض وہی کام کریں گی جس کے لئے انہوں نے سیکیورٹی کلئیرنس حاصل کی ہے۔

عالمی این جی اوز کی رجسٹریشن اب صرف آن لائن ہوگی جس کا طریقہ کارانتہائی سادہ کردیا گیا ہے اور رجسٹریشن کی مدت اب پانچ سال کے بجائے تین سال ہوگی۔

انہوں نے یہ بھی کہا کہ غیر ملکی این جی اوز کے باہرسے آنے والے اہلکاراب اپنا ویزہ تبدیل نہیں کراسکیں گے۔

این جی اوز کو حکومت پاکستان کے ساتھ ایک مفاہمتی یادداشت پر دستخط کرنے ہوں گے اور اسی ایم او یو کے تحت کام کرنا ہوگا اور اسکی باقاعدہ مانیٹرنگ ہوگی۔

چوہدری نثارنے یہ بھی کہا کہ غیر ملکی این جی اوز پاکستان کے اندراورباہرحکومت کی اجازت کے بغیرفنڈ ریزنگ نہیں کرسکیں گی۔

ان کا یہ بھی کہنا تھا کہ عالمی این جی اوزاب حکومت سے اجازت حاصل کئے بغیرمقامی این جی اوز کی مدد نہیں کرسکیں گی۔

چوہددری نثارنے یہ بھی کہا کہ یہ کوئی آمرانہ پالیسی نہیں ہے اورہم سمجھتے ہیں کہ بہت سی این جی او اچھا کام کررہی ہیں اورہم ان کی قدرکرتے ہیں۔

انہوں نے یہ بھی کہا کہ عالمی این جی اوز کی آن لائن رجسٹریشن کے لئے آئندہ ساٹھ دن انتہائی اہم ہیں۔

Print Friendly, PDF & Email

Comments

comments

یہ بھی پڑھیں