مراکش میں مساجد کو ماحول دوست بنانے کا آغاز -
The news is by your side.

Advertisement

مراکش میں مساجد کو ماحول دوست بنانے کا آغاز

رباط: مراکش کی تمام بڑی مساجد کو ماحول دوست بنانے کے منصوبے کا آغاز کردیا گیا ہے۔ یہ منصوبہ 2 ماہ بعد منعقد ہونے والی کلائمٹ چینج کی کانفرنس کوپ 22 کی تیاریوں کی ایک کڑی ہے۔

مراکش کی وزارت اوقاف و مذہبی امور کے مطابق 6 شہروں کی 64 مساجد کو ماحول دوست بنانے کے منصوبے کا اعلان کیا گیا ہے۔ اس منصوبے سے ملک بھر کی 15 ہزار مساجد کی استعمال شدہ تونائی میں 40 فیصد کمی لائی جائے گی۔

morocco-3

واضح رہے کہ مراکش 2 ماہ بعد کلائمٹ چینج (موسمیاتی تغیر) کی عالمی سالانہ کانفرنس کی میزبانی کرنے جارہا ہے۔ کوپ یا کانفرنس آف پارٹیز ہر سال دنیا بھر کے ماحولیاتی مسائل سے نمٹنے کے اقدامات پر غور و فکر کے لیے منعقد کی جاتی ہے۔

گذشتہ برس پیرس میں ہونے والی کانفرنس میں ایک تاریخی معاہدے پر دستخط کیے گئے جس میں پاکستان سمیت 195 ممالک نے اس بات کا عزم کیا کہ وہ اپنی صنعتی ترقی کو محدود کریں گے اور اس بات کو یقینی بنائیں گے کہ ان کی صنعتی ترقی عالمی درجہ حرارت میں 2 ڈگری سینٹی گریڈ سے زائد اضافہ نہ کرے۔

شارجہ کی ماحول دوست مسجد *

مراکش میں مساجد کو ماحول دوست بنانے کے منصوبے کا آغاز اسی معاہدے کے تحت کیے جانے والے اقدامات کا حصہ ہے۔ منصوبے کے تحت مساجد میں توانائی کی بچت کرنے والی لائٹس اور شمسی توانائی کے سسٹم نصب کیے جائیں گے جن کے ذریعہ وضو خانوں میں گرم پانی اور مساجد کو ٹھنڈا رکھنے والے اے سی کی سہولت فراہم کی جائے گی۔

منصوبے میں شراکت دار جرمن ڈویلپمنٹ آرگنائزیشن جی آئی زیڈ کے مطابق یہ منصوبہ عام لوگوں میں بھی توانائی کی بچت کے حوالے سے آگاہی بیدار کرے گا۔ یہی نہیں اس منصوبے میں شامل تمام اشیا مقامی مارکیٹوں میں تیار کی جائیں گی جس سے مقامی افراد کو روزگار بھی ملے گا۔

morocco-4

اس سے قبل مراکش کے سلطان کنگ محمد ششم ملک میں ایک ماحولیاتی پالیسی کا بھی نفاذ کر چکے ہیں جس کے تحت 34 ملین آبادی والے اس ملک میں کئی ماحولیاتی منصوبوں پر کام ہورہا ہے۔

مراکش 2001 میں ہونے والی کوپ 7 کی بھی میزبانی کر چکا ہے۔

Comments

comments

یہ بھی پڑھیں