site
stats
اے آر وائی خصوصی

ماؤں کا عالمی دن‘ ماں کی یاد میں لکھی خوں رلاتی نظم

کراچی: پاکستان سمیت دنیا بھرمیں ماں سے اپنی محبت کے اظہار کا دن منایا جارہا ہے، جس کا مقصد ماؤں کی عظمت کا اعتراف اورانہیں خراج تحسین پیش کرنا ہے۔

اس دن کو منانے کا مقصد معاشرے میں ماؤں سے محبت اوران کے احترام کوفروغ دینا ہے مگربہت سی مائیں ایسی بھی ہیں جوناخلف اولاد کی نافرمانی کی وجہ سے زندگی اولڈ ہاوس میں گزارنے پر مجبور ہیں۔

یاد رہے کہ ماؤں کے عالمی دن منانے کی تاریخ بہت قدیم ہے اور اس کا سب سے پہلے یونانی تہذیب میں سراغ ملتا ہے جہاں تمام دیوتاؤں کی ماں ”گرہیا دیوی“ کے اعزاز میں یہ دن منایا جاتا تھا۔ سولہویں صدی میں ایسٹر سے 40 روز پہلے انگلستان میں ایک دن ”مدرنگ سنڈے“ کے نام سے موسوم تھا۔ امریکہ میں مدرز ڈے کا آغاز 1872ءمیں ہوا۔

سن 1907ءمیں فلاڈیفیا کی اینا جاروس نے اسے قومی دن کے طور پر منانے کی تحریک چلائی جو بالآخر کامیاب ہوئی اور 1911ءمیں امریکہ کی ایک ریاست میں یہ دن منایا گیا، اور اب دنیا کے اکثرممالک میں ہرسال مئی کے دوسرے اتوار کو یہ دن منایا جاتا ہے۔

آج کے دن کی مناسبت سے آپ کے ذوقِ مطالعہ کی تسکین کے لیے فیصل آباد سے تعلق رکھنے والے شاعرعلی زریون کی نظم ’’مائے ‘‘ آپ کے پیشِ خدمت ہے۔


مائے


سُنو ماں
جی نہیں لگتا
قسم سے
اب تمھارے بِن یہاں پر جی نہیں لگتا
تم اچھی تھیں بہت مائے
بتایا تک نہیں مجھ کو
بِنا سسکی بھرے، اک خواب میں سوئیں
تو جاگیں دوسری جانب
اور اتنی دور جا نکلیں جہاں سے واپسی ممکن نہیں ہوتی
ہمیشہ ڈانٹتی تھیں تم
” بتائے بن کبھی بھی دیر تک باہر نہ بیٹھا کر”
مگر خود کَیا کِیا مائے
کوئی ایسے بھی کرتا ہے ؟؟
عدم آباد کی دیوار کے اُس پار ایسے جا کے بیٹھی ہو
جہاں سے یاد آ سکتی ہے لیکن ۔۔۔۔۔۔۔ تم نہیں مائے
جہاں تم ہو
وہاں سب خیر ہے، پیارا ہے اور سر سبز ہے سب کچھ
وہاں دھڑکا نہیں کوئی
یہاں خطرہ ہی خطرہ ہے
یہاں تنبیہ پر تکفیر لاگو ہے
ہوس زادوں کے ہاتھوں عشق کی تحقیر لاگو ہے
میں اب تک اُس خدا کے ساتھ ہوں
جس کا تعارف تم نے بچپن میں کرایا تھا
بتایا تھا
خدا ظلمت نہیں ہوتا
خدا خود آگہی کا اسمِ اعظم ہے
خدا کے نام لیوا، نام لیوائی کا خدشہ بھی نہیں رکھتے
تمھی نے تو سکھایا تھا
علی اپنا، حسین اپنا، عُمر اپنا ، ہر اک صدّیق ہے اپنا
کوئی جھگڑا نہیں تھا
ہم سبیلیں خود لگاتے تھے
محرّم کے دنوں میں کوئی گھر میں بھی اگر ہنستا تو تم کچھ بولتی کب تھیں
نگاہوں ہی نگاہوں میں کوئی تنبیہ تھی جو جاری ہوتی تھی
وہ کیسی سرزنش تھی
جو نہایت پیار سے تعلیم دیتی تھی
تو سب بچوں کی آنکھوں میں محرّم جاگ اٹھتا تھا
بھلا ہم ایسے لا علموں کو کب معلوم ہوتا تھا
کہاں ہنستا کہاں ہنسنا نہیں ہے
تم بتاتی تھیں
مجھے سب یاد ہے مائے
تمھارا مجھ سے یہ کہنا
علی پتّر تُو پنجابی اچ نئیں لکھدا؟
جے نئیں لکھدا تے لکھیا کر
فقیراں عاشقاں سُچیاں دی دھرتی دی بڑی انمول بولی اے”
میں لکھدا سی مِری مائے
ترے پیراں دی مٹی دی قسم مائے
میں پنجابی بھی لکھتا تھا
مگر تم کو سنانے کی کبھی ہمت نہ پڑتی تھی
تمھاری قبر کی مٹی کی خوشبو سے لپٹتا ہوں
تو پھر یہ سوچتا ہوں
کس جگہ ہوں میں
میں جب تکفیر کے تیروں سے چھلنی لوگ تکتا ہوں
تو کہتا ہوں
خدا کے نام لیواؤں کو اک ’’ماں‘‘ کی ضرورت ہے
جو ان کو نرم کر پائے
جو ان کو یہ بتا پائے
خدا ظالم نہیں ہوتا
سنو مائے
میں تم کو یاد کرتا ہوں
خدا بھی یاد آتا ہے
خدا کو یاد کرنا بھی تمھی نے تو سکھایا تھا

علی زریون

Print Friendly, PDF & Email
20

Comments

comments

اس ویب سائیٹ پر موجود تمام تحریری مواد کے جملہ حقوق@2018 اے آروائی نیوز کے نام محفوظ ہیں

To Top