متحدہ کے قائد نے اختیارات’ رابطہ کمیٹی‘ کےسپرد کردیے -
The news is by your side.

Advertisement

متحدہ کے قائد نے اختیارات’ رابطہ کمیٹی‘ کےسپرد کردیے

لندن: متحدہ قومی موومنٹ کے قائد نے تنظیم سے متعلق تمام اختیارات رابطہ کمیٹی کے سپرد کرتے ہوئے آرا م کرنے کا فیصلہ کرلیا ہے، فاروق ستار نے گزشتہ روز ان کی صحت یابی تک تنظیمی معاملات سے انہیں دور رکھنے کا اعلان کیا تھا۔

ایم کیو ایم رابطہ کمیٹی لندن کے رہنما مصطفیٰ عزیزآبادی نے ٹویٹر پر پارٹی قائد کی جانب سے ایک بیان جاری کیا ہے جس میں انہوں نے اپنے دوروز قبل کے بیان پر پاکستان کے عوام سے معافی مانگتے ہوئے رابطہ کمیٹی پاکستان کے فیصلے کی توثیق کی ہے۔

گزشتہ روز متحدہ قومی موومنٹ کے سینئر رہنماڈاکٹر فاروق ستار نے کراچی پریس کلب میں انتہائی اہم پریس کانفرنس کرتے ہوئے اس بات کا اعلان کیاتھا کہ ان کی پارٹی کے تمام تر فیصلے اب پاکستان میں ہوں گے۔

byan

انہوں نے دو روز قبل پارٹی رہنما کی جانب سے دیے گئے پاکستان مخالف بیان اوران کے اکسانے پر کارکنان کی جانب سے اے آروائی نیوز اور دیگر میڈیا ہاؤسز پر حملے کی مذمت کرتے ہوئے اس بیان اور کارکنان سے اظہارِ لاتعلقی کیا اور کہا کہ اس قسم کے واردات متحدہ قائد کی ذہنی طبعیت کی ناسازی کی بنا پر تواتر سے پیش آرہے ہیں جس کی بنا پر فیصلہ کیا گیا ہے کہ قائد کی صحت یابی تک ایم کیو ایم لندن رابطہ کمیٹی اور قائد سے لاتعلق رہے گی اور تمام تر فیصلے پاکستان میں ہی کیے جائیں گے۔

متحدہ قائد کی جانب سے جاری کردہ بیان میں یہ بھی کہا گیا ہے کہ وہ رابطہ کمیٹی کے فیصلے پر عمل کریں گےاور اپنی صحت کے مسائل پر توجہ دیں گے‘اور رابطہ کمیٹی ملکی معاملات میں فیصلے لینے کے لیے مکمل بااختیار ہوگی۔

جاری کردہ بیان کے مطابق انہوں نے رابطہ کمیٹی سے اپیل کی ہے کہ گرفتار اور لاپتہ کارکنان کی رہائی اور بازیابی کے مسئلے پر خصوصی توجہ مرکوز رکھی جائے۔

ایم کیو ایم کارکنان کا اے آر وائی نیوز کے دفتر پر حملہ*

ذرائع کا کہنا ہےکہ پالیسی سازی کے اختیارات بھی رابطہ کمیٹی کے سپر د کرنے کا اعلان کیا گیا ہے جبکہ لندن میں پارٹی رہنماﺅں کو بلا جواز بیان بازی سے روک دیا گیا ہے ۔

پریس کانفرنس کے دوران فاروق ستار کے ہمرا ہ سندھ اسسمبلی کے اپوزیشن لیڈر خواجہ اظہار الحسن‘ نسرین جلیل اور عامر لیاقت موجود تھے‘ تاہم عامر خان نے چند گھنٹوں بعد ایم کیو ایم سےعلیحدگی کا اعلان کردیا تھا۔

یاد رہے کہ متحدہ قومی موومنٹ کے قائد نے دو روز قبل پاکستان اور افواج مخالف بیانات دیے تھے اور کارکنان کو میڈیا ہاؤسز پر حملے کے لیے اکسایا تھا جس کے بعد ایم کیو ایم کے مسلح کارکنان اے آروائی نیوز کے بیورو آفس پر حملہ آور ہوگئے تھے ۔

Comments

comments

یہ بھی پڑھیں