site
stats
سندھ

ایم کیو ایم پاکستان کو جامعہ کراچی میں مزاحمت کا سامنا

کراچی : ایم کیو ایم پاکستان کے رہنماؤں خواجہ اظہار الحسن اور فیصل سبزواری کو جامعہ کراچی آمد کے موقع پر مخالف دھڑے کی جانب سے شدید مزاحمت کا سامنا کرنا پڑا، طالبِ علموں کی جانب سے غداروں استعفی دو کے نعرے بلند کیے گئے۔

تفصیلات کے مطابق جامعہ کراچی میں نئے تعلیمی سال کے لیے داخلوں کا آغاز ہو گیا۔ اس موقع پر مختلف تنظیموں کی جانب سے طالب علموں کی رہنمائی کے لیے استقبالیہ اسٹال لگائے جاتے ہیں اس ایونٹ کی تیاری کے لیے ایم کیو ایم پاکستان کے رہنما فیصل سبزواری اور خواجہ اظہار الحسن جامعہ کراچی پہنچے تھے۔

وہاں موجود اے پی ایم ایس او سے تعلق رکھنے کچھ کارکنان نے ایم کیو ایم پاکستان کے خلاف شدید نعرے بازی شروع کردی اور دونوں رہنماؤں کو کسی بھی قسم کی سرگرمی سے روک دیا، طالب علم دونوں رہنماؤں کی موجودگی تک غداروں استعفٰی دو کے نعرے بلند کرتے رہے۔

بعد ازاں ایم کیو ایم پاکستان سے تعلق رکھنے والے دونوں اراکین اسمبلی پولیس کی بھاری نفری کے ہمرا واپس لوٹ گئے جب کہ ایم کیو ایم پاکستان کی حمایت کرنے والے اے پی ایم ایس او کے کارکنان نے استقبالیہ کیمپوں کا پولیس کی مدد سے انتظام سنبھال لیا۔

واضح رہے کہ متحدہ قومی موومنٹ میں ہونے والی ٹوٹ پھوٹ کے نتیجے میں پی ایس پی اور ایم کیو ایم پاکستان نامی دو دھڑے سامنے آچکے ہیں جب کہ بانی ایم کیو ایم سے رابطے برقرار رکھنے والے ایم کیو ایم لندن کہلائے جا رہے ہیں،ایم کیو ایم کے طلبہ ونگ نے اپنا تعلق لندن سے ہی جڑے رکھا تھا۔

جس کے بعد ایم کیو ایم پاکستان کی جانب سے چند روز قبل طلبہ ونگ اے پی ایم ایس او کے نئے عہدیداروں کا چناؤ کیا گیا تھا جس کا باقاعدہ اعلان عارضی دفتر پی آئی بی میں منعقد کیے گئے ایک اجلاس میں خود ڈاکٹر فاروق ستار نے کیا تھا۔

Print Friendly, PDF & Email
20

Comments

comments

اس ویب سائیٹ پر موجود تمام تحریری مواد کے جملہ حقوق@2018 اے آروائی نیوز کے نام محفوظ ہیں

To Top