The news is by your side.

Advertisement

ایم کیو ایم پاکستان نے سندھ ٹیسٹنگ سروسز کی کارکردگی پر سوالات اٹھا دئیے

کراچی: ایم کیو ایم پاکستان نے سندھ ٹیسٹنگ سروسز کی کارکردگی پر سوالات اٹھاتے ہوئے صوبائی حکومت سے ملازمتوں کیلئےٹیسٹنگ سروسز کی کارکردگی سامنےلانے کا مطالبہ کر دیا۔

اس سلسلے میں ایم کیو ایم رہنما خواجہ اظہار الحسن نے وزیراعلی سندھ مراد علی شاہ کو خط لکھا جس میں کہا گیا ہے کہ سندھ کےنوجوانوں میں سرکاری نوکریوں کی بندر بانٹ پرتشویش ہے۔

خواجہ اظہار الحسن نے سندھ حکومت کی ملازمتوں کیلئےٹیسٹنگ سروسز کی کارکردگی سامنےلانےکا مطالبہ کرتے ہوئے کہا کہ سندھ ٹیسٹنگ سروسز کو بطور تھرڈ پارٹی ٹیسٹ لینےاور قابلیت جانچنے کیلئےمقرر کیا گیا مگر سندھ کی نوکریوں کا مستقبل طےکرنے والے ادارے کی تفصیل کیوں نہیں دی جارہی۔

خط میں خواجہ اظہار الحسن کا کہنا تھا کہ بطور ایم پی اے آئینی استحقاق ہے کہ معلومات فراہم کی جائیں، نوکریوں پر ادارے کےکردار اور سوالات کی تفصیلات بھی فراہم کی جائیں۔

واضح رہے کہ انکوائری کمیٹی نےجعلی ڈومیسائل کی تیاری میں ڈپٹی کمشنرز کو قصور وار قرار دیتے ہوئے جاری کردہ تمام جعلی ڈومیسائل منسوخ کرنےکی سفارش کی ہے۔

رپورٹ میں انکوائری کمیٹی نے سندھ حکومت کو پی آرسی کےقانون میں مزیدسختی کی سفارش کرتے ہوئے تجویز دی ہے کہ جعلی ڈومیسائل سے ملازمتیں حاصل کرنےوالوں کوفارغ کیاجائے اور10سال میں جاری ڈومیسائل کی جانچ پڑتال کیلئے علیحدہ انکوائری کی جائے۔

رپورٹ کے مطابق سندھ کے4اضلاع میں محدود وقت میں200سے زائد ڈومیسائل جاری ہوئے، مختلف اضلاع میں فیکٹریوں اور دکانوں کے پتہ پر ڈومیسائل جاری ہوئے۔

Comments

یہ بھی پڑھیں