The news is by your side.

Advertisement

سانحہ 12 مئی: سیاسی جماعت کے ٹارگٹ کلرکا 24 افراد کو قتل کرنے کا اعتراف

کراچی: ماڈل کالونی سے گرفتار ہونے والے سیاسی جماعت کے ٹارگٹ کلر رفعت اللہ عرف کامران کالو نے دوران تفتیش سانحہ 12 مئی میں دو درجن افراد کو قتل کرنے سمیت 34 افراد کی ٹارگٹ کلنگ کرنے کا اعتراف کرلیا ہے۔

تفصیلات کے مطابق ماڈل کالونی سے گزشتہ دنوں گرفتار ہونے والے سیاسی جماعت کے ٹارگٹ کلر نے دوران تفتیش سانحہ 12 مئی میں ملوث ہونے کا اقرار کرلیا ہے، کامران کالو نے انکشاف کیا کہ اُس نے 12 مئی والے روز 24 افراد کو فائرنگ کر کے قتل کیا علاوہ 34 افراد کی کلنگ میں ملوث ہے۔

رفعت اللہ نے انکشاف کیا کہ سانحہ 12 مئی کے بعد سی ٹی ڈی نے گرفتار کیا تاہم رشوت دی تو کوئی کیس درج نہیں کیا گیا اور انویسٹی گیشن یونٹ کے حوالے کردیا گیا جہاں سے وہ 5 لاکھ روپے ادا کر کے رہا ہوا۔

پڑھیں: ’’ سانحہ 12 مئی، 21 ٹارگٹ کلرز کی فہرست تیار ‘‘

کامران کالو نے انکشاف کیا کہ قیادت کی جانب سے قتل کا ٹاسک دیا جاتا تھا، اب تک جن لوگوں کو قتل کیا ان کے بارے میں کچھ علم نہیں کہ وہ کون تھے جبکہ ملزم نے شاہ فیصل کے ایک گھر میں زبردستی داخل ہوکر خاتون کے ساتھ بدسلوکی کی اور مزاحمت پر اُس کے شوہر کو قتل کیا۔

سیاسی جماعت کے ٹارگٹ کلر نے بتایا کہ قتل کرنے کے بعد اُن کے عزیز و اقارب کو ڈرا دھمکا کر ایف آئی آر کے اندارج سے روکا جاتا تھا اورعلاقے میں لوگوں کو خوفزدہ کر کے زبرستی سستے مکان خرید کر مہنگے داموں فروخت کیے جاتے تھے۔

مزید پڑھیں: ’’ ایم کیو ایم کا سابق یونٹ انچارج گرفتار، 12 مئی اور متعدد وارداتوں کا اعتراف ‘‘

ٹارگٹ کلر نے اعتراف کیا کہ شراب اور اسلحے کی خریداری کے لیے دکانداروں سے بھتہ لیا جاتا تھا اور اسلحہ ذخیرہ کر کے شہر میں ٹارگٹ کلنگ کی جاتی تھی جبکہ اس کام کے لیے ایک خصوصی ٹیم بھی تشکیل دی گئی تھی۔

Print Friendly, PDF & Email

Comments

comments

یہ بھی پڑھیں