The news is by your side.

Advertisement

میرے پاس ٹریک ٹو ڈائیلاگ کا سب سے بڑا مینڈیٹ ہے: محمد علی درانی

لاہور: پاکستان مسلم لیگ (فنکشنل) کے جنرل سیکریٹری محمد علی درانی نے کہا ہے کہ ان کے پاس ٹریک ٹو ڈائیلاگ کا سب سے بڑا مینڈیٹ ہے، مولانا فضل الرحمان نے شرائط کے ساتھ ڈائیلاگ کو آگے بڑھانے کا کہا، جلد سیاسی درجہ حرارت میں کمی ہوگی۔

اے آر وائی نیوز کے پروگرام اعتراض ہے میں بات کرتے ہوئے محمد علی درانی نے کہا کہ کوئی بھی ڈائیلاگ اتفاق سے نہیں، اختلاف سے شروع ہوتا ہے، میرے پاس ٹریک ٹو ڈائیلاگ کا مینڈیٹ ہے، مجھے یقین ہے سب مذاکرات کی میز پر بیٹھیں گے۔

انھوں نے کہا ملک میں اس وقت ڈائیلاگ کی ضرورت ہے، اپوزیشن کے استعفوں سے کوئی مسئلہ حل نہیں ہوگا، ملک کے بڑے اسٹیک ہولڈرز کہہ چکے ہیں کہ بات چیت ہونی چاہیے، اگر حکومت اور اپوزیشن کا ٹکراؤ بڑھتا رہا تو عوام کا ردِ عمل آئے گا۔

محمد علی درانی نے کہا مجھے یقین ہے سب مذاکرات کی میز پر بیٹھیں گے، جب سب بیٹھیں گے تو سب کے تھوڑے تھوڑے مسئلےحل ہوں گے، ہر آدمی چاہتا ہے موجودہ حالات کا کوئی نہ کوئی حل ضرور نکلے۔

گرینڈ مذاکرات کے لیے اپوزیشن میں اختیارات کس کے پاس ہوں گے؟

ان کا کہنا تھا ٹریک ٹو ڈائیلاگ کی ملاقاتیں خفیہ ہی ہوتی ہیں، استعفوں کے بعد بھی بات کرنی ہوگی تو پہلے ہی کیوں نہ کر لی جائے، جب اپوزیشن اور حکومت کہے بات نہیں کرنی تو پھر ڈائیلاگ اور بھی ضروری ہو جاتے ہیں۔

فنکشنل لیگ کے رہنما نے کہا ٹریک ٹو ڈائیلاگ کا مقصد یہ ہے کہ کوئی ایک ایجنڈا نکل آئے جس پر بات ہو سکے، پارلیمنٹ کے 2 پہیے ہوتے ہیں ایک حکومت دوسری اپوزیشن، موجودہ حالات میں آگ پر تیل ڈالنے کی بجائے پانی ڈالنے کا کام کیا جائے، حکومت اور اپوزیشن مذاکرات کی میز پر نہیں بیٹھتے تو نقصان عوام کا ہوگا۔

انھوں نے کہا ہمیں عوام کے مسائل کے حل کے لیے آگے آنا ہوگا، کم عرصے میں سیاسی درجہ حرارت کم ہوتا ہوا نظر آ رہا ہے۔

Comments

یہ بھی پڑھیں