The news is by your side.

Advertisement

شیرخوار بچی کو دودھ کی جگہ تیزاب پلانے والی ماں انجام کو پہنچ گئی

قاہرہ: مصری عدالت نے نومولود بیٹی کو دودھ کی جگہ تیزاب پلانے والی ماں پر  جرم ثابت ہونے پر سزائے موت کا حکم دے دیا۔

غیرملکی خبررساں ادارے کی رپورٹ کے مطابق مصر میں خاتون نے اپنی نومولود بچی کو دودھ پلانے کے بجائے اسے تیزاب پلا کر مار ڈالا، عدالت نے جرم ثابت ہونے پر خاتون کو پھانسی کی سزا سنادی۔

افسوسناک واقعہ قاہرہ سے 175 کلو میٹر دور شمال میں واقعی ساحلی پٹی بہیرا کے نجی میڈیکل کلینک میں پیش آیا جہاں ایک گھریلو خاتون کو اپنی بچی کی کاسٹک مادہ پلا کر قتل کرنے کے جرم میں  موت کی سزا سنائی ۔

مصری میڈیا کے مطابق اس المناک جرم کا آغاز نرسنگ عملہ اور رحمانیہ شہر کے ایک کلینک میں ڈیوٹی پر موجود ڈاکٹر کے ذریعے ایک نوزائیدہ بچے کی خراب ہوتی صحت اور اس کے ہونٹوں پر مضر اثرات کی موجودگی سے ہوا۔

میڈیکل سینٹر کے نوزائیدہ انتہائی نگہداشت وارڈ (این آئی سی یو) کے ڈائریکٹر نے نرسنگ عملے اور فالو اپ ڈاکٹر نے بچی کا علاج کیا اور سی سی ٹی وی کیمروں کا جائزہ لیا۔

ڈائریکٹر کا بتانا تھا کہ بچے کی والدہ نے نرسنگ اسٹاف سے نوزائیدہ بچی کو دودھ پلایا اور پھر ایک ایسا انجیکشن نکالا جس میں اس کے کپڑوں کے تہوں سے انتہائی سنکنرن کیمیکل (سلفیورک ایسڈ) موجود تھا اور بچی کو وہ پلایا اس کے بعد سرنج کو کوڑے ڈان میں پھینک دیا۔

سلفیورک تیزاب نے بچی کے پیٹ کو بری طرح سے جھلسا کر اس کے پیٹ میں سوراخ کردئیے جو موت کی وجہ بنے۔

؎متاثرہ بچی کے والد بیرون ملک ملازمت سرانجام دے رہے تھے وہ اطلاع ملتے ہی وطن واپس پہنچے اور قتل کی استغاثہ کو اطلاع دی جس نے پوسٹ مارٹم میں جرم کی تفتیش کا حکم دیا اور جرم ثابت ہونے پر سفاک ماں کو پھانسی کی سزا سنائی گئی۔

Comments

یہ بھی پڑھیں