The news is by your side.

Advertisement

تعلیم کے بجٹ میں گزشتہ سال کی نسبت اضافہ کیا ہے: وزیر اعلیٰ سندھ

کراچی: وزیر اعلیٰ سندھ مراد علی شاہ کا کہنا ہے کہ تعلیم کے بجٹ میں گزشتہ سال کی نسبت اضافہ کیا ہے۔ بجٹ تصدیق 30 ستمبر تک کی ہے، نئی اسمبلی بعد میں پھر تصدیق کرے گی۔

تفصیلات کے مطابق وزیر اعلیٰ سندھ مراد علی شاہ نے پوسٹ بجٹ پریس کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ گزشتہ 8 سال سے پوسٹ بجٹ پریس کانفرنس کر رہا ہوں۔ اسمبلی 28 مئی کو تحلیل ہوجائے گی، پھر نگران سسٹم آئے گا۔

وزیر اعلیٰ کا کہنا تھا کہ نگران حکومت 2 ماہ میں عام انتخابات کروائے گی۔ بجٹ کے دو حصے ہیں۔ ایک سپلیمنٹری حصہ ہے جس میں زیادہ اخراجات کی منظوری ہوتی ہے۔ دوسرے حصے میں پورے سال کا بجٹ ہے لیکن تصدیق 3 ماہ کی لیں گے۔

انہوں نے کہا کہ بجٹ تصدیق 30 ستمبر تک کی ہے، نئی اسمبلی بعد میں پھر تصدیق کرے گی۔ ’تعلیم کے بجٹ میں گزشتہ سال کی نسبت اضافہ کیا ہے، ملازمین کی بنیادی تنخواہوں میں 10 فیصد کا اضافہ کیا ہے‘۔

ان کا کہنا تھا کہ وفاق سے کراچی کی تعمیر نو کے لیے بات کی مگر کچھ حاصل نہ ہوا۔ 10 بلین سے کراچی میں سڑکیں، فلائی اوور، انڈر پاسز بنائیں گے۔ گورنر سندھ نے 7 بلین روپے کی اسکیم کا افتتاح کرنے کی بات کی۔ ’رواں سال وفاق نے پی ایس ڈی پی میں ایک ٹکا نہیں رکھا‘۔

وزیر اعلیٰ نے کہا کہ انڈس ہائی وے روڈ پر حادثات سے اموات میں اضافہ ہو رہا ہے۔ وفاقی حکومت منصوبے کی رقم ہونے کے باوجود کچھ نہیں کر رہی۔ منصوبے کا ٹھیکہ بھی دے چکے ہیں لیکن حاصل کچھ نہیں ہوا۔

انہوں نے مزید کہا کہ سندھ کو صرف 300 ملین روپے کی 3 اسکیموں سے نوازا گیا۔ آبی شعبے میں سندھ کو 1.7 فیصد شیئر دیا گیا۔ ’کیا یہ ہمارے ساتھ انصاف ہو رہا ہے‘؟

مراد علی شاہ نے کہا کہ سندھ میں پیپلز پارٹی 2013 کے بعد اور مضبوط ہوئی ہے۔ پنجاب میں روزانہ کی بنیاد پر لوگ ن لیگ چھوڑ کر جا رہے ہیں۔ پیپلز پارٹی سندھ میں کامیابی سے پورا پاکستان جیتے گی۔

خیال رہے کہ گزشتہ روز سندھ حکومت نے 3 ماہ کے لیے منی بجٹ پیش کیا تھا جو 30 ستمبر تک نافذ العمل ہوگا۔ ٹیکس فری بجٹ کا کل حجم 11 کھرب 44 ارب روپے ہے جبکہ اس میں کسی نئی اسکیم کو شامل نہیں کیا گیا۔


خبر کے بارے میں اپنی رائے کا اظہار کمنٹس میں کریں۔ مذکورہ معلومات کو زیادہ سے زیادہ لوگوں تک پہنچانے کے لیے سوشل میڈیا پر شیئر کریں۔

Comments

comments

یہ بھی پڑھیں