The news is by your side.

Advertisement

سیہون: ٹھپہ مافیا سرگرم، مراد علی شاہ کا ردِعمل سامنے آگیا

سیہون: سابق وزیراعلیٰ سندھ مراد علی شاہ نے کہا ہے کہ پوسٹل بیلٹ پیپرریٹرننگ افسر کی ذمہ داری ہے، حلقے سے انتخاب لڑنے کا یہ مقصد نہیں کہ ٹھپوں کا کام میں نے ہی کروایا۔

اے آر وائی کی الیکشن کے حوالے سے خصوصی ٹرانسمیشن میں گفتگو کرتے ہوئے مراد علی شاہ کا کہنا تھا کہ پوسٹل بیلٹ پیپر کے معاملے پر بلاکر انکوائری کرنی چاہیے تھی مگر گرفتاری عمل میں لائی گئی۔

اُن کا کہنا تھا کہ نگراں حکومت کی پھرتیاں قابلِ دید ہیں کہ ایف آئی آر کے بغیر گرفتاری کی گئی،  پوسٹل بیلٹس پیپرز پر میرا نام خراب نہ کریں بلکہ پہلے تحقیقات مکمل کرلیں کیونکہ حلقے سے انتخاب لڑنے کا مطلب ہرگز یہ نہیں کہ یہ کام میرا ہی ہے۔

سابق وزیر اعلیٰ سندھ کا کہنا تھا کہ پوسٹل بیلٹس ریٹرننگ افسر کی ذمہ داری ہے اس سے میرا کیا لینا دینا، یہ اُن لوگوں کا کام ہے جو سندھ تقسیم کرنے کی باتیں کررہے ہیں۔

مزید پڑھیں: سیہون میں دھاندلی پر اسسٹنٹ ریٹرننگ افسران کی گرفتاری کا حکم

مراد علی شاہ نے دعویٰ کیاکہ پیپلزپارٹی سندھ سے ماضی کے مقابلے میں زیادہ نشستیں حاصل کرے گی،گرینڈ ڈیموکریٹک الائنس پچھلے الیکشن میں بھی تھی جس کا نتیجہ سب کےسامنےہے۔

کراچی کو انتظامی یونٹ بنانے کے حوالے سے مراد علی شاہ کا کہنا تھا کہ پنجاب کے حقیقی لوگ نئے صوبے کی بات کرتے ہیں جبکہ سندھ میں نئے صوبے کے لیے جنوبی پنجاب جیسی صورتحال نہیں ہے۔

واضح رہے کہ صوبائی اسمبلی کے حلقے پی ایس 80 سیہون کے ایجوکیشن آفس میں ٹھپے لگانے کا انکشاف سامنے آیا تھا جسے اے آر وائی نے بے نقاب کیا جس کے بعد پانچ افراد کی گرفتاری عمل میں لائی گئی۔

الیکشن کمیشن آف پاکستان نے اے آر وائی کی خبر کا نوٹس لیا اور سیہون میں پوسٹل بیلٹ پیپرز کے ذریعے دھاندلی کے واقعے پر اسسٹنٹ ریٹرننگ افسران کی گرفتاری کا حکم جاری کیا تھا۔


خبر کے بارے میں اپنی رائے کا اظہار کمنٹس میں کریں‘ مذکورہ معلومات کو زیادہ سے زیادہ لوگوں تک پہنچانے کےلیے سوشل میڈیا پرشیئر کریں۔

Comments

comments

یہ بھی پڑھیں