site
stats
پاکستان

مری معاہدہ: بلوچستان کا مستقبل کیا ہوگا؟

اسلام آباد/ کوئٹہ: مری معاہدے کے تحت چار دسمبر کو وزیراعلیٰ ڈاکٹرعبدالمالک بلوچ کی وزارتِ اعلیٰ کی مدت ختم ہورہی ہے تاہم میاں نواز شریف کی خاموشی کی وجہ سے صورتحال تاحال مبہم ہے۔

ذرائع کے مطابق بلوچستان حکومت کے قیام کے وقت مری میں ہونے والے معاہدے کی مدت چاردسمبر کو مکمل ہورہی ہے جس کے بعد بلوچستان میں حکومت تبدیل ہونی ہے تاہم میاں نواز شریف کی خاموشی نے صورتحال کو مبہم بنادیا ہے۔

ذرائع نے دعویٰ کیا ہے کہ بلوچستان کی اتحادی حکومت شامل دونوں فریقین اپنی اپنی سطح پر کوششیں جاری رکھے ہوئے ہیں اور اس سلسلے میں آئندہ چوبیس سے اڑتالیس گھنٹوں کو انتہائی اہم قرار دیا جارہا ہے۔

ذرائع کا کہنا ہے کہ میاں نواز شریف نے نواب ثناءاللہ زہری کو اسلام آباد طلب کرلیا ہے اورآئندہ ایک دو روز میں ان سے ملاقات متوقع ہے اور وزیراعلیٰ بلوچستان ڈاکٹرعبدالمالک بلوچ بھی لاہور کے دورے کے بعد اسلام آباد پہنچ چکے ہیں۔

ذرائع کے مطابق نواب ثناءاللہ زہری کی وزیراعظم سے ملاقات کے بعدنیشنل پارٹی کے سربراہ میر حاصل خان بزنجو اور پشتوامیپ کے سربراہ محمود خان اچکزئی کی بھی ملاقات وزیراعظم سے متوقع ہے۔

دوسری جانب ذرائع کے مطابق میاں نوازشریف کے قریبی مسلم لیگ ن کے حلقے ڈاکٹر عبدالمالک بلوچ کو وزیراعلیٰ برقرار رکھنے کے خواہاں ہیں۔

ڈاکٹرعبدالمالک بلوچ کی گزشتہ روز میاں شہباز شریف سے بھی ملاقات ہوئی ہے۔

مسلم لیگ ن بلوچستان مری معاہدے پرعملدرآمد کی خواہاں ہے جبکہ نیشنل پارٹی اور پشتونخوامیپ کو وزیراعظم کے فیصلے کا انتظار ہے۔

ذرائع کا دعویٰ ہے کہ مری معاہدے پرعملدرآمد ہونے یا نہ ہونے کے حوالے سے نیشنل سیکورٹی ایڈوزائر
لیفٹیننٹ (ر)جنرل ناصر جنجوعہ کی جانب سے وزیراعظم کو دیا جانے والا فیڈ بیک اہم ہوگا۔

Print Friendly, PDF & Email
20

Comments

comments

اس ویب سائیٹ پر موجود تمام تحریری مواد کے جملہ حقوق@2018 اے آروائی نیوز کے نام محفوظ ہیں

To Top