The news is by your side.

Advertisement

سابق سیکریٹری خزانہ مشتاق رئیسانی کے ریمانڈ میں 14 دن کی توسیع

کوئٹہ: سابق سیکریٹری خزانہ مشتاق رئیسانی کے ریمانڈ میں 14 دن کی توسیع کردی گئی۔ کرپشن میں سہولت کار ندیم اقبال بھی نیب کے حوالے کردیا گیا۔

سابق سیکریٹری خزانہ بلوچستان کو پہلے ریمانڈ کی مدت پوری ہونے پر کوئٹہ کی احتساب عدالت میں پیش کیا گیا۔ نیب نے تفتیش کے لیے مزید ریمانڈ کی استدعا کی جسے عدالت نے منظور کرلیا۔

ساتھ ہی مشتاق رئیسانی کے کرپشن میں سہولت کار ندیم اقبال کا بھی 14 روزہ ریمانڈ دے دیا۔ ندیم اقبال سابق مشیر خزانہ کے آبائی علاقے خالق آباد میونسپل کمیٹی کے اکاؤنٹنٹ تھے۔ عدالت نے مشتاق رئیسانی کو 15 جون کو دوبارہ پیش کرنے کا حکم دیا ہے۔

گرفتار سیکریٹری خزانہ مشتاق رئیسانی نے 11 افراد کے نام بتا دیے *

نیب نے 6 مئی کو سابق سیکریٹری خزانہ مشتاق رئیسانی کے گھر پر چھاپہ مار کر 63 کروڑ روپے کی نقدی اور کروڑوں روپے مالیت کے زیورات اور پرائز بانڈ برآمد کیے تھے۔ انہیں اس سے قبل بھی 14 روزہ ریمانڈ پر نیب کے حوالے کیا گیا تھا۔

نیب نے مشتاق رئیسانی کے سہولت کار اسد شاہ کی نشاندہی پر کوئٹہ کی ایک بیکری پر چھاپہ مار کر 57 لاکھ روپے، غیر ملکی کرنسی، سونا اور پراپرٹی کے کاغذات بھی برآمد کیے تھے۔

سابق سیکریٹری خزانہ کی گرفتاری کے بعد مشیرخزانہ بلوچستان میر خالد خان لانگو اپنے عہدے سے مستعفی ہونے کے بعد منظر عام سے غائب ہوگئے تھے۔ نیب نے مستعفی مشیر خزانہ کو 2 مرتبہ پیش ہونے کے لیے سمن جاری کیے لیکن وہ پیش نہ ہوئے۔

بعد ازاں 17 مئی کو خالد لانگو نے منظر عام پر آ کر اسلام آباد ہائیکورٹ میں حفاظتی ضمانت کے لیے درخواست دائر کردی۔ عدالت نے خالد لانگو کی 12 روزہ حفاظتی ضمانت منظور کرلی تھی۔

سیکریٹری خزانہ مشتاق رئیسانی کے گھرسے کروڑوں مالیت کی کرنسی و زیورات برآمد *

اس موقع پر سابق وزیر اعلیٰ بلوچستان عبدالمالک نے سیکریٹری خزانہ مشتاق رئیسانی کی گرفتاری اور میگا کرپشن کے اعترافات کے بعد خود کو بھی کسی بھی قسم کی تحقیقات کے لیے پیش کردیا تھا۔

Print Friendly, PDF & Email

Comments

comments

یہ بھی پڑھیں