The news is by your side.

Advertisement

انتہا پسند ہندوؤں نے کھلی جگہ پر نماز جمعہ رکوا دی

ہریانہ: بھارت میں انتہا پسند ہندوؤں نے کھلی جگہوں پر مسلمانوں کو نماز جمعہ سے روک دیا۔

تفصیلات کے مطابق بھارتی ریاست ہریانہ کے شہر گڑگاؤں میں انتہا پسند ہندوؤں نے کھلی جگہوں پر مسلمانوں کی جمعے کی نماز رکوا دی۔

عالمی میڈیا میں چھپنے والی رپورٹس کے مطابق ہندوؤں نے گڑگاؤں کے سیکٹر 12 اے میں واقع ایک جگہ پر قبضہ کر لیا، اور وہاں گائے کے گوبر کے اُپلے ڈال دیے ہیں۔

مذکورہ مقام کی تصاویر بھی سامنے آ گئی ہیں، جن میں دیکھا جا سکتا ہے کہ لوگوں نے وہاں ڈیرہ جما لیا ہے۔

گزشتہ ہفتے اس جگہ پر انتہا پسند ہندوؤں نے ’پوجا‘ کا انعقاد بھی کیا تھا، جس کے لیے انھوں نے زمین پر گوبر کے اپلوں سے مورتی بنائی تھی، جس کے بعد سے یہاں اپلے تاحال بکھرے پڑے ہیں۔

میدان پر قبضہ جمائے لوگوں نے دعویٰ بھی کیا ہے کہ وہ یہاں والی بال کورٹ بنا رہے ہیں، آج مقامی مسلمان اس میدان میں نماز جمعہ ادا نہیں کر سکے، مسلم تنظیموں کو پچھلے کئی ہفتوں سے اس جگہ اور دیگر مقامات پر نماز جمعہ سے روکنے کے لیے احتجاج اور دھمکیوں کا سامنا ہے۔

انتہا پسند ہندوؤں کا کہنا ہے کہ یہ عوامی مقامات ہیں، یہاں ہم مسلمانوں کو نماز ادا کرنے نہیں دیں گے۔

واضح رہے کہ گڑگاؤں کا سیکٹر 12 اے ان 29 جگہوں میں سے ایک ہے، جن کے بارے میں 2018 میں ہندوؤں اور مسلمانوں کے درمیان ہوئے ایک معاہدے میں یہ طے ہوا تھا، کہ یہ مسلمانوں کی نماز کے لیے ’مختص‘ ہے۔

گزشتہ ہفتے پولیس نے سیکٹر 12 اے میں احتجاج کرنے والے 30 افراد کو اپنی تحویل میں بھی لیا تھا۔

Comments

یہ بھی پڑھیں