site
stats
پاکستان

کیا وزیراعظم ہاؤس کے فون ٹیپ کرنے کے لیے جے آئی ٹی بنائی گئی؟ مصدق ملک

اسلام آباد : وزیراعظم نواز شریف کے معاون خصوصی مصدق ملک نے کہا ہے کہ کیا جے آئی ٹی کی تشکیل اس لیے کی گئی تھی کہ لوگوں کو سلطانی گواہ بنایا جائے اور وزیراعظم کے فون ٹیپ کیے جائیں؟

وزیراعظم نواز شریف کے معاون خصوصی برائے پانی و توانائی مصدق ملک نے جے آئی ٹی کے سامنے وزیراعظم اور ان کے اہل خانہ کے یکے بعد دیگرے پیشی پر ردعمل دیتے ہوئے جے آئی ٹی کی تشکیل اور اب تک کی کارکردگی پرسولات اٹھا دیئے۔

مصدق ملک کا کہنا تھا کہ اگر تفتیش سےڈرتے تو مٹھائی کیوں بانٹتے؟ کیا مٹھائیاں اس لیے تقسیم کی گئی تھیں کہ وزیراعظم ہاؤس کےفون ٹیپ کیے جائیں؟ لوگوں کو سلطانی گواہ بنایا جائے اورجےآئی ٹی میں جمع کرائے گئے کاغذات شام کومیڈیا پر ڈال دیئے جائیں ؟

انہوں نے کہا کہ سپریم کورٹ کے فیصلے کے تحت جے آئی ٹی تشکیل دی گئی تھی اور کابینہ نے فیصلہ کرکے ریاست کی طاقت جے آئی ٹی کو دی تھی لیکن الزام لگانے والے سلطانی گواہ تلاش کرنے کی کوشش کررہے ہیں اورسلطانی گواہ بنانے کے لیے دھونس دھمکی کے ذریعے طارق شفیع کو ڈرایا گیا۔

مصدق ملک جو کہ ترجمان وزیراعظم بھی ہیں کا کہنا تھا کہ آئین کے تقاضے پورے کرتے ہوئے تمام ثبوت فراہم کیے تاہم اتنے دن گزرنے کے باوجود جے آئی ٹی نے لندن میں کاغذات کی جانچ پڑتال نہیں کی اور قطری شہزادے کے 3 خطوط آئے کہ وہ اپنے بیان پرقائم ہیں تاہم جےآئی ٹی کو قطر اور گلف بھی جانا چاہیے تھا لیکن ہو نہیں گئے۔

انہوں نے کہا کہ کیا جےآئی ٹی 1977 کےالیکشن کی طرح کا 90 روز کی توسیع مانگنا چاہتی ہے؟ کیوں کہ یا تو جےآئی ٹی یا تو فیصلہ کرچکی ہے یا 60 دن پورے ہونے پر توسیع مانگے گی۔

Print Friendly, PDF & Email
20

Comments

comments

اس ویب سائیٹ پر موجود تمام تحریری مواد کے جملہ حقوق@2018 اے آروائی نیوز کے نام محفوظ ہیں

To Top