The news is by your side.

Advertisement

طلوعِ صبح آزادی اور مصطفٰی علی ہمدانی

برصغیر کے مسلمانوں کو 14 اور 15 اگست کی درمیانی شب آزاد وطن کی نوید سنانے والے مصطفٰی علی ہمدانی کی برسی آج منائی جارہی ہے۔ وہ 1980ء میں‌ آج ہی کے دن کراچی میں انتقال کرگئے تھے۔

مصطفیٰ علی ہمدانی 29 جولائی 1909ء کو لاہور میں پیدا ہوئے تھے۔ انھوں نے قیامِ پاکستان کا تاریخی اعلان کرتے ہوئے ریڈیو پر جو الفاظ ادا کیے تھے وہ آج بھی ریکارڈ کا حصّہ ہیں: اس براڈ کاسٹر اور معروف شاعر نے کہا تھا، ’’بسم اللہ الرحمن الرحیم، السلامُ علیکم 14 اور 15 اگست 1947ء کی درمیانی شب، رات کے 12 بجے پاکستان براڈ کاسٹنگ سروس طلوعِ صبح آزادی۔‘‘

ان کا بچپن اردو کے مایہ ناز انشا پرداز مولانا محمد حسین آزاد کے گھر میں گزرا تھا جس نے ان کے اندر مطالعہ اور علم و ادب کا شوق پیدا کردیا۔ 1939ء میں وہ لاہور ریڈیو اسٹیشن سے بطور براڈ کاسٹر وابستہ ہوئے اور 1969ء میں ریٹائر ہوگئے۔

مصطفٰی علی ہمدانی ہی نے لاہور اسٹیشن سے بابائے قوم قائدِ اعظم محمد علی جناح کی وفات کی جانکاہ خبر بھی سنائی تھی۔ انھوں نے 1965ء اور 1971ء کی جنگوں کے دوران لاہور اسٹیشن سے خصوصی نشریات کے دوران قوم اور سرحدوں پر دشمن کا مقابلہ کرنے والے سپاہیوں کا عزم و حوصلہ بڑھایا۔

مصطفٰی علی ہمدانی اردو کے علاوہ عربی اور فارسی زبانوں پر عبور رکھتے تھے۔ انھیں تلفظ اور الفاظ کی درست ادائی کے حوالے سے سند تسلیم کیا جاتا تھا۔

Comments

یہ بھی پڑھیں