فاروق ستارنے بانی ایم کیوایم کو دوبارہ زندہ کیا، مصطفیٰ کمال -
The news is by your side.

Advertisement

فاروق ستارنے بانی ایم کیوایم کو دوبارہ زندہ کیا، مصطفیٰ کمال

کراچی : پاک سرزمین پارٹی کے چیئرمین سید مصطفیٰ کمال نے کہا ہے کہ ڈاکٹر فاروق ستار اور متحدہ پاکستان نے بانی ایم کیوایم کو دوبارہ زندہ کیا، ایم کیو ایم پاکستان کو لندن سے الگ نہیں سمجھتے، بانی ایم کیوایم شیطانوں کا پیر ہے۔

ان خیالات کا اظہار انہوں نے پاک سر زمین پارٹی کی جانب سے انتخابی نشان ڈولفن کی تقریب رونمائی سے خطاب کرتے ہوئے کیا، انتخابی نشان کی تقریب رونمائی میں پی ایس پی کے صدر انیس قائم خانی سمیت دیگررہنماؤں نے شرکت کی۔

مصطفی ٰکمال نے کہا کہ پی ایس پی کارکنان 22اگست کے متحدہ پاکستان کے ڈرامے کی وجہ سے جاں بحق ہوئے، آج بانی ایم کیو ایم پھر سوشل میڈیا کے ذریعے لوگوں کو بہکارہا ہے، بانی ایم کیوایم شیطانوں کا پیرہے۔

چیئرمین پی ایس پی مصطفیٰ کمال نے مزید کہا کہ ایم کیوایم بانی متحدہ کا سیاسی اور عسکری ونگ ہے، ایم کیوایم لندن کو ایم کیوایم پاکستان سے الگ نہیں سمجھتے، انہوں نے کہا کہ جب تم پاکستان کو نہیں مانتے تو کس منہ سے عدالتوں کی بات کرتے ہو؟

مصطفی کمال نے کہا کہ میری جماعت ایک رات میں شہرت حاصل کرنے والی جماعت نہیں، میری پارٹی میں ایک،ایک کر کے فرد،ایم پی اے اورذمہ د ار آئے، میری جماعت ہر نشیب و فراز سے لڑتی ہوئی یہاں تک پہنچی ہے، ہم کسی کو ہتھیاروں سے نہیں اپنے صبر سے ماریں گے، کیونکہ ہم نے بھی صبر کیا ہے، انشااللہ آگے بھی کریں گے۔

ان کا کہنا تھا کہ ہم گولیوں سے نہیں ظالموں کو اپنے صبر سے نیست ونابود کریں گے، اللہ کی رضا کیلئے کام کرناچاہتے ہیں، اپنے رب کی مدد سے پارٹی کو طاقتور بنائیں گے۔

انہوں نے اس بات کا عہد کیا کہ ہم کوئی ایسا کام نہیں کریں گے جس سے اللہ ناراض ہو، ہم پر الزام لگانے والے رسوا ہوئے اورآئندہ بھی ہوں گے، ہم بارود اورگولیوں سے پارٹی کو طاقتور نہیں بنائیں گے۔

قبل ازیں تقریب سے خطاب کرتے ہوئے ڈاکٹرصغیراحمد نے کہا کہ ڈولفن کا نشان انسان دشمن نہیں بلکہ انسان دوست ہے، سیاسی جماعتوں کو چیلنج کرتا ہوں کہ ڈولفن کا کوئی منفی پہلو ہےتو ڈھونڈ کر دکھائیں۔

پتنگ کی خطرناک ڈور کے باعث کئی جانیں گئیں، انہوں نے ایم کیو ایم پاکستان کو اپنی تنقید کا نشانہ بناتے ہوئے کہا کہ پتنگ والو اب تمہیں کراچی والے کبھی ووٹ نہیں دینگے۔

Comments

comments

یہ بھی پڑھیں